Mian Kiya Ho Gar Abroye Khaamdar Ko Dekha

میاں کیا ہو گر ابروئے خم دار کو دیکھا

میاں کیا ہو گر ابروئے خم دار کو دیکھا

کیوں میری طرف دیکھ کے تلوار کو دیکھا

آنکھیں مری پھوٹیں تری آنکھوں کے بغیر آہ

گر میں نے کبھی نرگس بیمار کو دیکھا

دیکھے نہ مرے اشک مسلسل کبھی تم نے

اپنی ہی سدا موتیوں کے ہار کو دیکھا

اتوار کو آنا ترا معلوم کہ اک عمر

بے پیر ترے ہم نے ہی اطوار کو دیکھا

دیکھا نہ کبھو کوچۂ دل دار کو رنگیں

بس ہم نے بھی اس دیدۂ خوں بار کو دیکھا

اس میں بھی در اندازوں نے سو رخنے نکالے

احساںؔ نے جو اس رخنۂ دیوار کو دیکھا

عبدالرحمان احسان دہلوی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(489) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Abdul Rahman Ehsan Dehlvi, Mian Kiya Ho Gar Abroye Khaamdar Ko Dekha in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 39 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Abdul Rahman Ehsan Dehlvi.