Ee Mere Ankhoo Yeh Besood Justaju Kaise

اے میری آنکھو یہ بے سود جستجو کیسی

اے میری آنکھو یہ بے سود جستجو کیسی

جو خواب خواب رہیں ان کی آرزو کیسی

رگوں میں خون ہے شاخوں کی سرخ رو غنچے

خزاں میں اب کے بہاروں کی رنگ و بو کیسی

تمام پتوں کو موسم نے زرد زرد کیا

یہ ایک شاخ تمنا ہے سبز رو کیسی

کرو تو یاد ملن کے وہ اولیں لمحے

کہ چھڑ گئی تھی نگاہوں میں گفتگو کیسی

یہ شہر دل میں بھلا آج کس کی آمد ہے

یہ محو رقص ہیں خوشبوئیں کو بہ کو کیسی

افق کا چہرہ سخنؔ اس کدر اداس ہے کیوں

شفق کے رنگ میں یہ سرخئ لہو کیسی

عبدالوہاب سخن

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(344) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Abdul Wahab Sukhan, Ee Mere Ankhoo Yeh Besood Justaju Kaise in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 26 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Abdul Wahab Sukhan.