Kabhi Piyara Koi Manzar Lage Ga

کبھی پیارا کوئی منظر لگے گا

کبھی پیارا کوئی منظر لگے گا

بدلنے میں اسے دم بھر لگے گا

نہیں ہو تم تو گھر جنگل لگے ہے

جو تم ہو ساتھ جنگل گھر لگے گا

ابھی ہے رات باقی وحشتوں کی

ابھی جاؤگے گھر تو ڈر لگے گا

کبھی پتھر پڑیں گے سر کے اوپر

کبھی پتھر کے اوپر سر لگے گا

در و دیوار کے بدلیں گے چہرے

خود اپنا گھر پرایا گھر لگے گا

چلیں گے پاؤں اس کوچے کی جانب

مگر الزام سب دل پر لگے گا

ہم اپنے دل کی بابت کیا بتائیں

کبھی مسجد کبھی مندر لگے گا

اگر تم مارنے والوں میں ہوگے

تمہارا پھول بھی پتھر لگے گا

کہاں لے کر چلو گے سچ کا پرچم

مقابل جھوٹ کا لشکر لگے گا

ہلاکو آج کا بغداد دیکھے

تو اس کی روح کو بھی ڈر لگے گا

زمیں کو اور اونچا مت اٹھاؤ

زمیں کا آسماں سے سر لگے گا

جو اچھے کام ہوں گے ان سے ہوں گے

برا ہر کام اپنے سر لگے گا

سجاتے ہو بدن بے کار جاویدؔ

تماشا روح کے اندر لگے گا

عبداللہ جاوید

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(466) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Abdullah Javed, Kabhi Piyara Koi Manzar Lage Ga in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 19 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Abdullah Javed.