Ajeeb Shakhas Hai Dharti Pey Asmaan Sa Hai

عجیب شخص ہے دھرتی پہ آسمان سا ہے

عجیب شخص ہے دھرتی پہ آسمان سا ہے

خدا مقام نہیں پھر بھی لا مکان سا ہے

اگے جو صبح کا سورج تو اک مشین ہے وہ

ڈھلے جو شام تو پھر جسم کی تکان سا ہے

سکوت دشت تمنا ہے اس کو جائے پناہ

نواح عارض و گیسو میں بے نشان سا ہے

برہنہ رہتا ہے شمشیر بے اماں کی طرح

ہر ایک شخص یہاں اس سے بد گمان سا ہے

اٹھا نہ پائے گا یک لمحۂ نشاط وجود

وہ اپنی تیغ نفس سے لہولہان سا ہے

نگاہ دار فلک تا فلک رہا وہ کمالؔ

اور اب زمین پہ ٹوٹی ہوئی کمان سا ہے

عبداللہ کمال

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(318) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Abdullah Kamal, Ajeeb Shakhas Hai Dharti Pey Asmaan Sa Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 23 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Abdullah Kamal.