Apni Ankhoon Ko Umeedoon Se Sajaye Rakhna

اپنی آنکھوں کو امیدوں سے سجائے رکھنا

اپنی آنکھوں کو امیدوں سے سجائے رکھنا

جلتی راتوں میں کوئی خواب بچائے رکھنا

لوٹ کر آؤں گا پھر گاؤں تمہارے اک دن

اپنے دروازے پہ اک دیپ جلائے رکھنا

اجنبی جان کے پتھر نہ سواگت کو بڑھیں

اپنی گلیوں کو مرا نام بتائے رکھنا

سونے ساون میں ستائے گی بہت پروائی

درد کو دل میں مگر اپنے دبائے رکھنا

ہجر کی تیرہ شبی ٹھہری ہے تقدیر وصال

میری یادوں کے ستاروں کو جگائے رکھنا

خوش نقابی کا بھرم ٹوٹنے پائے نہ کمالؔ

غم کو ہونٹوں کے تبسم میں چھپائے رکھنا

عبداللہ کمال

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1606) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Abdullah Kamal, Apni Ankhoon Ko Umeedoon Se Sajaye Rakhna in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Urdu Poetry. Also there are 23 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Abdullah Kamal.