Bulandiyoon K Dhundhlake Main Tha Khuda Sa Laga

بلندیوں کے دھندلکے میں تھا خدا سا لگا

بلندیوں کے دھندلکے میں تھا خدا سا لگا

جو میں قریب سے گزرا تو وہ شناسا لگا

نہ کوئی جسم تھا اس کا نہ کوئی چہرہ مگر

جہت جہت سے ابھرتی ہوئی صدا سا لگا

عقب میں چھوڑتا آیا شکستگی کا غبار

کہ سنگ میل بھی مجھ کو اک آئنہ سا لگا

بہت نشیب و فراز اس کے طے کیے میں نے

وہ سر سے پاؤں تلک ایک راستا سا لگا

یہی کہا تھا کہ تم سب بدلتے چہرے ہو

ہر ایک شخص مجھے پھر خفا خفا سا لگا

صدائے آمد و شد باعث سفر تھی کمالؔ

نفس نفس مجھے اپنے لہو کا پیاسا لگا

عبداللہ کمال

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(281) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Abdullah Kamal, Bulandiyoon K Dhundhlake Main Tha Khuda Sa Laga in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 23 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Abdullah Kamal.