Dasht O Sehra Phir Se Apnain Bhi Kiya

دشت و صحرا پھر سے اپنائیں بھی کیا

دشت و صحرا پھر سے اپنائیں بھی کیا

وحشتوں کو اپنی سمجھائیں بھی کیا

درد ہی خوابوں کا خمیازہ سہی

دور دشت درد سے جائیں بھی کیا

اور کچھ لمحے ڈبو دیں چائے میں

یار اس گرمی میں گھر جائیں بھی کیا

یہ بہت کچھ تو ہے گردانا تمہیں

اور اس سے نیچے اب آئیں بھی کیا

فیصلہ کر دے گی اک موج ہوا

ڈہتی دیواروں کو ہم ڈھائیں بھی کیا

شاعری بازی گری تو ہے نہیں

شعبدے یاروں کو دکھلائیں بھی کیا

عبداللہ کمال

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(256) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Abdullah Kamal, Dasht O Sehra Phir Se Apnain Bhi Kiya in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 23 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Abdullah Kamal.