Qadam Qadam Pey Naya Imtehan Hai Mere Liye

قدم قدم پہ نیا امتحاں ہے میرے لیے

قدم قدم پہ نیا امتحاں ہے میرے لیے

یہ شہر آج بھی اک ہفت خواں ہے میرے لیے

نہیں ہے اب کوئی احساس روز و شب بھی مجھے

بس ایک عرصۂ پیکار جاں ہے میرے لیے

نہ رہ گزار شجر دار ہے نہ آب و سحاب

یہ تیز دھوپ یہ صحرائے جاں ہے میرے لیے

میں اک ستارہ ہوں اس کے فلک سے ٹوٹا ہوا

وہ دھند ہوتی ہوئی کہکشاں ہے میرے لیے

سمیٹ لیتی ہے مجھ کو میں ٹوٹا پھوٹا سہی

یہ رات خرقۂ آوارگاں ہے میرے لیے

مہکتے رہتے ہیں خوابوں میں ہجرتوں کے گلاب

نئی زمین نیا آسماں ہے میرے لیے

عبور کرنا ہے دریائے شور مجھ کو کمالؔ

اور ایک کشتیٔ بے بادباں ہے میرے لیے

عبداللہ کمال

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(453) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Abdullah Kamal, Qadam Qadam Pey Naya Imtehan Hai Mere Liye in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 23 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Abdullah Kamal.