Tum Ne Jab Gher Main Andheroon Ko Bula Rakha Hai

تم نے جب گھر میں اندھیروں کو بلا رکھا ہے

تم نے جب گھر میں اندھیروں کو بلا رکھا ہے

اٹھ کے سو جاؤ کہ دروازے پہ کیا رکھا ہے

ہر کسی شخص کے رونے کی صدا آتی ہے

پھر کسی شخص نے بستی کو جگا رکھا ہے

اپنی خاطر بھی کوئی لفظ تراشیں یارو

ہم نے کس واسطے یوں خود کو بھلا رکھا ہے

دیکھنے کو ہے بدن اور حقیقت یہ ہے

ایک ملبہ ہے جو مدت سے اٹھا رکھا ہے

تو اگر تھا تو بہت دور تھے ہم تجھ سے کہ اب

تو نہیں ہے تو تجھے پاس بٹھا رکھا ہے

ہم کسی طرح تجھے ڈھونڈ لیں ممکن ہی نہیں

تو نے ہر راہ کو صحرا سے ملا رکھا ہے

عابد عالمی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(834) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Abid Almi, Tum Ne Jab Gher Main Andheroon Ko Bula Rakha Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 11 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Abid Almi.