Diyar E Rafta Ka Qissa Koi Sunao Mian

دیار رفتہ کا قصہ کوئی سناؤ میاں

دیار رفتہ کا قصہ کوئی سناؤ میاں

وہ دکھ جو سوے ہوے ہیں انھیں جگاؤ میاں

جو پاس ہے اسی غم سے یہ دن بتاؤ میاں

اب اس کے وعدہ فردا کو بھول جاؤ میاں

نہ تم نہ دنیا تمھاری ، ہمارے بس میں ہے

ہمیں تو دیکھنا ہے جو بھی دن دکھاؤ میاں

یہ آپ ہم خس و خاشاک ہیں ، ہمارا کیا

ہمیں تو بہنا ہے جس سمت ہو بہاؤ میاں

فساد و شور طلب میں گنوا دیا ہے اسے

وہ ایک شے جسے کہتے تھے رکھ رکھاؤ میاں

اگر نہیں رخ آئندہ کی خبر معلوم

تو پھر چراغ رہ رفتگاں جلاؤ میاں

نہیں ہے گر کوئی رنگ نشاط کی صورت

تو اس زمیں پہ کوئی حشر ہی اٹھاؤ میاں

ہمیں کہ زخم نظارہ پسند بھی ہے بہت

اور اب کے اس کی جھلک سے لگا ہے گھاؤ میاں

یہ نقد جاں لیے آئے تھے ہم تمھارے حضور

سو تم بھی کرنے لگے ہم سے بھاؤ تاؤ میاں

یہ بے گھری تو بہر طور ساتھ ہے ، پھر بھی

برا بھلا ہی سہی گھر کوئی بساؤ میاں

نہیں رہے گا نشاں تک جہان امکاں میں

جو ہو سکے تو یہاں بات کچھ بناؤ میاں

ابراراحمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(425) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Abrar Ahmad, Diyar E Rafta Ka Qissa Koi Sunao Mian in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 93 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Abrar Ahmad.