Ratta Hai Abroon Per Hath Aksar Lawabali Ka

رتا ہے ابرواں پر ہاتھ اکثر لاوبالی کا

رتا ہے ابرواں پر ہاتھ اکثر لاوبالی کا

ہنر سیکھا ہے اس شمشیر زن نے بید مالی کا

ہر اک جو عضو ہے سو مصرع دلچسپ ہے موزوں

مگر دیوان ہے یہ حسن سر تا پا جمالی کا

نگیں کی طرح داغ رشک سوں کالا ہوا لالا

لیا جب نام گلشن میں تمہارے لب کی لالی کا

رقیباں کی ہوا ناچیز باتاں سن کے یوں بد خو

وگرنہ جگ میں شہرا تھا صنم کی خوش خصالی کا

ہمارے حق میں نادانی سوں کہنا غیر کا مانا

گلا اب کیا کروں اس شوخ کی میں خوردسالی کا

یہی چرچا ہے مجلس میں سجن کی ہر زباں اوپر

مرا قصہ گویا مضموں ہوا ہے شعر حالی کا

تمہارا قدرتی ہے حسن آرائش کی کیا حاجت

نہیں محتاج یہ باغ سدا سر سبز مالی کا

لگے ہے شیریں اس کو ساری اپنی عمر کی تلخی

مزہ پایا ہے جن عاشق نیں تیرے سن کے گالی کا

مبارک نام تیرے آبروؔ کا کیوں نہ ہو جگ میں

اثر ہے یو ترے دیدار کی فرخندہ فالی کا

نجم الدین شاہ مبارک

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(327) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Abroo Shah Mubarak, Ratta Hai Abroon Per Hath Aksar Lawabali Ka in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 45 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Abroo Shah Mubarak.