Kaam Har Zakham Ne Marhum Ka Kiya Ho Jaise

کام ہر زخم نے مرہم کا کیا ہو جیسے

کام ہر زخم نے مرہم کا کیا ہو جیسے

اب کسی سے کوئی شکوہ نہ گلا ہو جیسے

عمر بھر عشق کو غم دیدہ نہ رکھے کیوں کر

حادثہ وہ کہ ابھی کل ہی ہوا ہو جیسے

ایک مدت ہوئی دیکھا تھا جسے پہلے پہل

تیرے چہرے میں وہی چہرہ چھپا ہو جیسے

حسن کے بھید کا پا لینا نہیں ہے آساں

ہے یہ وہ راز کہ رازوں میں پلا ہو جیسے

دور تک ایک نگہ جا کے ٹھہر جاتی ہے

وقت کا فاصلہ کچھ ڈھونڈ رہا ہو جیسے

یاد ماضی سے یہ افسردہ سی رونق دل میں

آخر شب کوئی دروازہ کھلا ہو جیسے

ہزل کو لوگ سحرؔ آج غزل کہتے ہیں

ذوق شعری پہ برا وقت پڑا ہو جیسے

ابو محمد سحر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1482) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Abu Mohammad Sahar, Kaam Har Zakham Ne Marhum Ka Kiya Ho Jaise in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 19 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Abu Mohammad Sahar.