Kya Janye Kis Baat Pay Maghrour Rahi Hon

کیا جانئے کس بات پہ مغرور رہی ہوں

کیا جانئے کس بات پہ مغرور رہی ہوں

کہنے کو تو جس راہ چلایا ہے چلی ہوں

تم پاس نہیں ہو تو عجب حال ہے دل کا

یوں جیسے میں کچھ رکھ کے کہیں بھول گئی ہوں

پھولوں کے کٹوروں سے چھلک پڑتی ہے شبنم

ہنسنے کو ترے پیچھے بھی سو بار ہنسی ہوں

تیرے لیے تقدیر مری جنبش ابرو

اور میں ترا ایمائے نظر دیکھ رہی ہوں

صدیوں سے مرے پاؤں تلے جنت‌ انساں

میں جنت انساں کا پتہ پوچھ رہی ہوں

دل کو تو یہ کہتے ہیں کہ بس قطرۂ خوں ہے

کس آس پہ اے سنگ سر راہ چلی ہوں

جس ہاتھ کی تقدیس نے گلشن کو سنوارا

اس ہاتھ کی تقدیر پہ آزردہ رہی ہوں

قسمت کے کھلونے ہیں اجالا کہ اندھیرا

دل شعلہ طلب تھا سو بہرحال جلی ہوں

ادا جعفری

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(329) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ada Jafri, Kya Janye Kis Baat Pay Maghrour Rahi Hon in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 90 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ada Jafri.