Hamain Tu Uss Ka Karam Ik Nigah Chahiye Tha

ہمیں تو اس کا کرم اک نگاہ چاہیے تھا

ہمیں تو اس کا کرم اک نگاہ چاہیے تھا

نہیں کہ ایک جہاں خیر خواہ چاہیے تھا

وہ تھا جو ایک عجب متقی مرے اندر

اسے کبھی کبھی اذن _ گناہ چاہیے تھا

غرض ہی کیا اسے ، اے خوشنما دروں سے ترے

جسے تجھ ایسا حسیں خواہ مخواہ چاہیے تھا

زمانہ بھی تھا تماشے کی تاک میں اور یاں

ہمیں بھی اپنے جنوں کا گواہ چاہیے تھا

گرہ میں باندھ لیں اس نے مری دعائیں ہی

سفر میں کچھ تو پئے زاد _ راہ چاہیے تھا

جو آج قصہ _ معمول بن گیا ہے عدیل

وہ لطف _ خاص ہمیں گاہ گاہ چاہیے تھا

عدیل شاکر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(570) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Adeel Shakir, Hamain Tu Uss Ka Karam Ik Nigah Chahiye Tha in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 49 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Adeel Shakir.