Jeewan Ka Yeh Khel Tamasha YuN Hi Chalta Rehta Hae

جیون کا یہ کھیل تماشا یونہی چلتا رہتا ہے

جیون کا یہ کھیل تماشا یونہی چلتا رہتا ہے

دن پھرتے ہیں لوگوں میں اور وقت بدلتا رہتا ہے

یاروں سے ہم وقت بلا میں آنکھیں پھیر تو لیتے ہیں

لیکن اک انجانا سا دکھ دل میں پلتا رہتا ہے

نظریں خیرہ کر دیتی ہے ایک جھلک لیلاﺅں کی

اور پھر انساں پورا جیون آنکھیں ملتا رہتا ہے

مفت کا روگ نہ پالو دل میں جی کو مت ہلکان کرو

دنیا کا ہر چڑھتا سورج آخر ڈھلتا رہتا ہے

ہجر کی آندھی ایسی آئی سب کچھ لے کر ساتھ گئی

پھر بھی دل میں آس کا دیپک بجھتا جلتا رہتا ہے

لوگ چھپائے پھرتے ہیں پتھر کی سلوں کو سینوں میں

اٰک ہمارا دل بیچارہ آگ اگلتا رہتا ہے

آفتاب احمد شاہ

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(537) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Aftab Ahmad Shah, Jeewan Ka Yeh Khel Tamasha YuN Hi Chalta Rehta Hae in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 21 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Aftab Ahmad Shah.