Kaya Ka Kurb

کایا کا کرب

اس نے دیکھا

وہ اکیلا اپنی آنکھوں کی عدالت میں

کھڑا تھا

بے کشش اوقات میں بانٹی ہوئی صدیاں

کسی جلاد کے قدموں کی آوازیں مسلسل

سن رہی تھیں

آنے والے موسموں کے نوحہ گر مدت سے

اپنی بے بسی کا زہر پی کر

مر چکے تھے

اس نے چاہا

بند کمرے کی سلاخیں توڑ کر باہر نکل جائے

مگر شاخوں سے مرجھائے ہوئے پتوں کی صورت

ہاتھ اس کے بازوؤں سے

گر چکے تھے

آفتاب اقبال شمیم

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(854) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Aftab Iqbal Shamim, Kaya Ka Kurb in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 34 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Aftab Iqbal Shamim.