Chori Se Do Ghari Ju Nizare Hue Tu Kiya

چوری سے دو گھڑی جو نظارے ہوئے تو کیا

چوری سے دو گھڑی جو نظارے ہوئے تو کیا

چلمن تو بیچ میں ہے اشارے ہوئے تو کیا

بوسہ دہی کا لطف ملا حسن بڑھ گیا

رخسار لال لال تمہارے ہوئے تو کیا

بے پردہ منہ دکھا کے مرے ہوش اڑاؤ تم

پردے کی آڑ سے جو نظارے ہوئے تو کیا

مجھ کو کڑھا کڑھا کے وہ ماریں گے جان سے

دلبر ہوئے تو کیا مرے پیارے ہوئے تو کیا

اے جاں مقابلہ مرے ہاتھوں سے کب ہوا

جوبن ترے ابھر کے کرارے ہوئے تو کیا

الفت کا لطف کیا جو بغل ہی نہ گرم ہو

وہ دل میں رہنے والے ہمارے ہوئے تو کیا

تاثیر دے دعا میں خدا ہے یہی دعا

اونچے جو دونوں ہاتھ ہمارے ہوئے تو کیا

بوسہ نہ دے وہ مجھ کو تو میں اس کو دل نہ دوں

اس گورے ہاتھ سے جو اشارے ہوئے تو کیا

تم سوؤ پھیل کے پھولوں کی سیج پر

فرقت میں ہم جو گور کنارے ہوئے تو کیا

سینہ ملا کے سینہ سے دل میں جگہ کرو

پھرتے ہو جوبنوں کو ابھارے ہوئے تو کیا

کب کھیلنے پکڑ کے ہوا میں سے لائے وہ

جگنو جو آہ دل کے شرارے ہوئے تو کیا

اے جاں ہے تیری زلف پریشاں کا حسن اور

حوروں کے بال ہیں جو سنوارے ہوئے تو کیا

آنکھیں کھلی بھی ہوں تو وہی سامنے رہے

آنکھوں کو بند کر کے نظارے ہوئے تو کیا

لاکھوں مزے ملیں مرے لب سے اگر ملیں

وہ گورے گال آنکھ کے تارے ہوئے تو کیا

یک بوسہ اور لونگا عرق منہ سے پوچھ کر

وہ آب آب شرم کے مارے ہوئے تو کیا

مائلؔ نہ ہو وصال تو کیا عشق کا مزا

معشوق دور سے وہ ہمارے ہوئے تو کیا

احمد حسین مائل

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1289) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ahmad Hussain Mael, Chori Se Do Ghari Ju Nizare Hue Tu Kiya in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 19 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ahmad Hussain Mael.