Loog Kehte Thay Wo Mosaam Hi Nahi Aane Ka

لوگ کہتے تھے وہ موسم ہی نہیں آنے کا

لوگ کہتے تھے وہ موسم ہی نہیں آنے کا

اب کے دیکھا تو نیا رنگ ہے ویرانے کا

بننے لگتی ہے جہاں شعر کی صورت کوئی

خوف رہتا ہے وہیں بات بگڑ جانے کا

ہم کو آوارگی کس دشت میں لائی ہے کہ اب

کوئی امکاں ہی نہیں لوٹ کے گھر جانے کا

دل کے پت جھڑ میں تو شامل نہیں زردی رخ کی

رنگ اچھا نہیں اس باغ کے مرجھانے کا

کھا گئی خون کی پیاسی وہ زمیں ہم کو ہی

شوق تھا کوچۂ قاتل کی ہوا کھانے کا

احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(588) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ahmad Mahfuz, Loog Kehte Thay Wo Mosaam Hi Nahi Aane Ka in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 25 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ahmad Mahfuz.