Phir Wohi Raat Phir Wohi Aawaz

پھر وہی رات پھر وہی آواز

پھر وہی رات پھر وہی آواز

میرے دل کی تھکی ہوئی آواز

کہیں باغ نخست سے آئی

کسی کوئل کی دکھ بھری آواز

ابھی چھایا نہیں ہے سناٹا

آ رہی ہے کوئی کوئی آواز

پھڑپھڑاہٹ کسی پرندے کی

کسی کونپل کی پھوٹتی آواز

ابھی محفوظ ہے ترا چہرہ

ابھی بھولی نہیں تری آواز

میرے بستر پہ آ کے لیٹ گئی

روشنی کی لکیر سی آواز

منہ اندھیرے جگا کے چھوڑ گئی

ایک صبح جمال کی آواز

دن سے فرصت کبھی ملے تو سنو

شام کا ساز رات کی آواز

گونجتا ہے ابھی ترانۂ شوق

وہی آہنگ ہے وہی آواز

ٹیڑھے میڑھے مڑے تڑے مکھڑے

ٹوٹی پھوٹی کٹی پھٹی آواز

بڑے دکھ جھیل کر کمائی ہے

جو بھی ہے یہ بری بھلی آواز

احمد مشتاق

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(820) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ahmad Mushtaq, Phir Wohi Raat Phir Wohi Aawaz in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 48 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ahmad Mushtaq.