Gardish Jisay Matlob Hai Gulzar Main Aawe

گردش جسے مطلوب ہے گلزار میں آوے

گردش جسے مطلوب ہے گلزار میں آوے

ہے عشق جسے وادی پرخار میں آوے

اک روز کبھی شکل خریدار میں آوے

دیکھے تو ذرا کوچہ و بازار میں آوے

جاتے ہوئے جاوے ہے عزیزوں کو رلاکر

مولود جو روتا ہوا سنسار میں آوے

ہوں سامنے میں اس کے وہ مارے کہ جلاوے

منظور ہے جوبھی نگہہ یار میں آوے

بدنام اگر ہوگا تو کیا نام نہ ہو گا

ہے شوق اسے سرخی اخبار میں آوے

دعوت کا اگر شوق ہے جاوے وہ کہیں اور

کرنے کو سیاست نہ وہ افطار میں آوے

آئینے میں شکل اس کی دکھا دے گا وہ اس کو

برقی کے اگر لطف اسے اشعار میں آوے

احمد علی برقیؔ اعظمی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1077) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ahmed Ali Barqi Aazmi, Gardish Jisay Matlob Hai Gulzar Main Aawe in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 12 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ahmed Ali Barqi Aazmi.