Hamari Ankhen Bhi Sahib Ajeeb Kitni Hain

ہماری آنکھیں بھی صاحب عجیب کتنی ہیں

ہماری آنکھیں بھی صاحب عجیب کتنی ہیں

کہ دل جو روئے تو کم بخت ہنسنے لگتی ہیں

تمہارے شہر سے چلیے کہ تنگ دستی نے

تمہارے شہر کی گلیاں بھی تنگ کر دی ہیں

یہ ہم ہیں بے ہنراں دیکھیے ہنر مندی

جو کوئی کام کریں ہم تو پوریں جلتی ہیں

نہ اس کا وصل ملا اور نہ روزگار یہاں

سو پہلے ہجر زدہ تھے اور اب کے ہجرتی ہیں

تو شاہ زادی کو لائیں وہ محو خواب ہے کیا

ہمیں یقیں نہیں پریاں بھی جھوٹ بولتی ہیں

احمد عطا

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1355) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ahmed Atta, Hamari Ankhen Bhi Sahib Ajeeb Kitni Hain in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 34 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ahmed Atta.