Kasheda Sir Say Tawaqa Abs Jhakao Ki Thi

کشیدہ سر سے توقع عبث جھکاؤ کی تھی

کشیدہ سر سے توقع عبث جھکاؤ کی تھی

بگڑ گیا ہوں کہ صورت یہی بناؤ کی تھی

وہ جس گھمنڈ سے بچھڑا گلہ تو اس کا ہے

کہ ساری بات محبت میں رکھ رکھاؤ کی تھی

وہ مجھ سے پیار نہ کرتا تو اور کیا کرتا

کہ دشمنی میں بھی شدت اسی لگاؤ کی تھی

مگر یہ درد طلب بھی سراب ہی نکلا

وفا کی لہر بھی جذبات کے بہاؤ کی تھی

اکیلے پار اتر کر یہ ناخدا نے کہا

مسافرو یہی قسمت شکستہ ناؤ کی تھی

چراغ جاں کو کہاں تک بچا کے ہم رکھتے

ہوا بھی تیز تھی منزل بھی چل چلاؤ کی تھی

میں زندگی سے نبرد آزما رہا ہوں فرازؔ

میں جانتا تھا یہی راہ اک بچاؤ کی تھی

احمد فراز

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(2241) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ahmed Faraz, Kasheda Sir Say Tawaqa Abs Jhakao Ki Thi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 154 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ahmed Faraz.