Qad O Gaisu Lab O Rukhsar Ke Afsanay Chalay

طویل راتوں کی خامشی میں مری فغاں تھک کے سو گئی ہے

طویل راتوں کی خامشی میں مری فغاں تھک کے سو گئی ہے

تمہاری آنکھوں نے جو کہی تھی وہ داستاں تھک کے سو گئی ہے

گلا نہیں تجھ سے زندگی کے وہ زاویے ہی بدل چکے ہیں

مری وفا وہ ترے تغافل کی نوحہ خواں تھک کے سو گئی ہے

مرے خیالوں میں آج بھی خواب عہد رفتہ کے جاگتے ہیں

تمہارے پہلو میں کاہش یاد آستاں تھک کے سو گئی ہے

سحر کی امید اب کسے ہے سحر کی امید ہو بھی کیسے

کہ زیست امید و نا امیدی کے درمیاں تھک کے سو گئی ہے

نہ جانے میں کس ادھیڑ بن میں الجھ گیا ہوں کہ مجھ کو راہیؔ

خبر نہیں کچھ وہ آرزوئے سکوں کہاں تھک کے سو گئی ہے

احمد راہی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(601) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ahmed Rahi, Qad O Gaisu Lab O Rukhsar Ke Afsanay Chalay in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 43 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ahmed Rahi.