Ghoom Phir Kar Isi Koochy Ki Taraf Ayain Gay

گھوم پھر کر اسی کوچے کی طرف آئیں گے

گھوم پھر کر اسی کوچے کی طرف آئیں گے

دل سے نکلے بھی اگر ہم تو کہاں جائیں گے

ہم کو معلوم تھا یہ وقت بھی آ جائے گا

ہاں مگر یہ نہیں سوچا تھا کہ پچھتائیں گے

یہ بھی طے ہے کہ جو بوئیں گے وہ کاٹیں گے یہاں

اور یہ بھی کہ جو کھوئیں گے وہی پائیں گے

کبھی فرصت سے ملو تو تمہیں تفصیل کے ساتھ

امتیاز ہوس و عشق بھی سمجھائیں گے

کہہ چکے ہم ہمیں اتنا ہی فقط کہنا تھا

آپ فرمائیے کچھ آپ بھی فرمائیں گے

ایک دن خود کو نظر آئیں گے ہم بھی اجملؔ

ایک دن اپنی ہی آواز سے ٹکرائیں گے

اجمل سراج

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(765) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ajmal Siraj, Ghoom Phir Kar Isi Koochy Ki Taraf Ayain Gay in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 19 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ajmal Siraj.