Aankhon Main Jo Aik Khawab Sa Hai

آنکھوں میں جو ایک خواب سا ہے

آنکھوں میں جو ایک خواب سا ہے

عالم کیا کیا دکھا رہا ہے

عالم اک انتظار کا ہے

کھلتا نہیں انتظار کیا ہے

قطرہ قطرہ جو پی چکا ہے

دریا دریا پکارتا ہے

کیا کہہ گئی زندگی کی آہٹ

جو ہے کسی سوچ میں کھڑا ہے

اے موج نسیم صبح گاہی

ہر غنچہ کا دل دھڑک رہا ہے

تم اور ذرا قریب آ جاؤ

خنجر رگ جاں تک آ گیا ہے

ہے دیدنی رنگ روئے قاتل

ہر زخم جواب مانگتا ہے

اے دشت جنوں گواہ رہنا

کانٹے ہیں اور اک برہنہ پا ہے

آثار اچھے نہیں شب ہجر

دل کو کچھ قرار سا ہے

لفظوں کو زبان مل رہی ہے

شاید اخترؔ غزل سرا ہے

اختر سعید خان

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(418) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Akhtar Saeed Khan, Aankhon Main Jo Aik Khawab Sa Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 51 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Akhtar Saeed Khan.