Dil Ki Rahain Dhondnay Jab Hum Chalay

دل کی راہیں ڈھونڈنے جب ہم چلے

دل کی راہیں ڈھونڈنے جب ہم چلے

ہم سے آگے دیدۂ پر نم چلے

تیز جھونکا بھی ہے دل کو ناگوار

تم سے مس ہو کر ہوا کم کم چلے

تھی کبھی یوں قدر دل اس بزم میں

جیسے ہاتھوں ہاتھ جام جم چلے

ہائے وہ عارض اور اس پر چشم نم

گل پہ جیسے قطرۂ شبنم چلے

آمد سیلاب کا وقفہ تھا وہ

جس کو یہ جانا کہ آنسو تھم چلے

کہتے ہیں گردش میں ہیں سات آسماں

از سر نو قصۂ آدم چلے

کھل ہی جائے گی کبھی دل کی کلی

پھول برساتا ہوا موسم چلے

بے ستوں چھت کے تلے اس دھوپ میں

ڈھونڈنے کس کو یہ میرے غم چلے

کون جینے کے لیے مرتا رہے

لو، سنبھالو اپنی دنیا ہم چلے

کچھ تو ہو اہل نظر کو پاس درد

کچھ تو ذکر آبروئے غم چلے

کچھ ادھورے خواب آنکھوں میں لیے

ہم بھی اخترؔ درہم و برہم چلے

اختر سعید خان

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(487) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Akhtar Saeed Khan, Dil Ki Rahain Dhondnay Jab Hum Chalay in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 51 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Akhtar Saeed Khan.