Nigahain Muntazir Hain Kis Ki Dil Ko Justojo Kya Hai

نگاہیں منتظر ہیں کس کی دل کو جستجو کیا ہے

نگاہیں منتظر ہیں کس کی دل کو جستجو کیا ہے

مجھے خود بھی نہیں معلوم میری آرزو کیا ہے

بدلتی جا رہی ہے کروٹوں پر کروٹیں دنیا

کسی صورت نہیں کھلتا جہان رنگ و بو کیا ہے

یہ سوچا دل کو نذر آرزو کرتے ہوئے ہم نے

نگاہ حسن خود آرا میں دل کی آبرو کیا ہے

مجھے اب دیکھتی ہے زندگی یوں بے نیازانہ

کہ جیسے پوچھتی ہو کون ہو تم جستجو کیا ہے

ہوا کرتی ہے دل سے گفتگو بے خواب راتوں میں

مگر کھلتا نہیں مجھ پر کہ اخترؔ گفتگو کیا ہے

میں ان آنکھوں کو کیا سمجھوں کہ اپنی خانہ ویرانی

جنہیں یہ بھی نہیں معلوم خون آرزو کیا ہے

کرن سورج کی کہتی ہے پھر آئے گی شب ہجراں

سحر ہوتی ہے اخترؔ سو رہو یہ ہاؤ ہو کیا ہے

اختر سعید خان

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(547) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Akhtar Saeed Khan, Nigahain Muntazir Hain Kis Ki Dil Ko Justojo Kya Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 51 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Akhtar Saeed Khan.