Tairange Nishat Tamana Ajeeb Hai

نیرنگیٔ نشاط تمنا عجیب ہے

نیرنگیٔ نشاط تمنا عجیب ہے

کچھ شام سے قفس میں اجالا عجیب ہے

شرما رہے ہیں تار گریبان و چاک دل

کچھ دن سے رنگ لالۂ صحرا عجیب ہے

ہر خواب اعتبار شکستوں سے چور ہے

دل میں مگر غرور تمنا عجیب ہے

سارا بدن ہے دھوپ میں جھلسا ہوا مگر

دل پر جو پڑ رہا ہے وہ سایہ عجیب ہے

پھینکے نہیں ہیں آج تلک ریزہ ہائے دل

ٹوٹے تعلقات کا رشتہ عجیب ہے

جب تک نظر نہ کیجیئے یک قطرہ خوں ہے دل

لیکن جو دیکھیے تو یہ دنیا عجیب ہے

اخترؔ یہ تیرے پاؤں کے کانٹے نئے نہیں

کانٹوں سے کھیلتا ہوا چھالا عجیب ہے

اختر سعید خان

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(277) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Akhtar Saeed Khan, Tairange Nishat Tamana Ajeeb Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 51 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Akhtar Saeed Khan.