Yeh Andhera Jo Ayan Subah Ki Tanveer Main Hai

یہ اندھیرا جو عیاں صبح کی تنویر میں ہے

یہ اندھیرا جو عیاں صبح کی تنویر میں ہے

کچھ کمی خون جگر کی ابھی تصویر میں ہے

اہل تقدیر نے سر رکھ دیا جس کے آگے

آج وہ عقدہ مرے ناخن تدبیر میں ہے

رنگ گل رنگ بتاں رنگ جبین محنت

جو حسیں رنگ ہے شامل مری تصویر میں ہے

میں نے جس خواب کو آنکھوں میں بسا رکھا ہے

تو بھی ظالم مرے اس خواب کی تعبیر میں ہے

لے اڑی موج بہاراں یہ الگ ہے ورنہ

آج بھی پاؤں مرا خانۂ زنجیر میں ہے

وہ مرے پوچھنے کو آئے ہیں سچ مچ اخترؔ

یا کوئی خواب حسیں منزل تعبیر میں ہے

اختر سعید خان

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(441) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Akhtar Saeed Khan, Yeh Andhera Jo Ayan Subah Ki Tanveer Main Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 51 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Akhtar Saeed Khan.