Dam E Essa Yad E Baiza K Qareene Wale

دم عیسیٰ ید بیضا کے قرینے والے

دم عیسیٰ ید بیضا کے قرینے والے

اب نہ منصور نہ سقراط سے پینے والے

وہی کوفی وہی لشکر وہی پیمان وفا

وہی آثار محرم کے مہینے والے

دم نکلتا ہے نہ سر جھکتا ہے دیوانوں کا

جانے کس آس پہ جیتے ہیں یہ جینے والے

یہ جو ساحل کے مناظر ہیں جو آوازیں ہیں

جا کے اس پار نہ پائیں گے سفینے والے

ہم محبت کی علامت ہیں جناب واعظ

ہم عداوت کے طلب گار نہ کینے والے

ایک پیغام ہو شاید مری خاموشی بھی

تجھ کو معلوم نہیں لب مرے سینے والے

آج کچھ لوگ ہیں صورت گر حالات اخترؔ

اور کچھ لوگ ہیں ماضی کے دفینے والے

ان کو تھوڑی سی اخوت بھی عطا ہو جائے

یہ جو لیتے ہیں ترا نام مدینے والے

اختر ضیائی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(881) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Akhtar Ziai, Dam E Essa Yad E Baiza K Qareene Wale in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Islamic Urdu Poetry. Also there are 22 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Islamic poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Akhtar Ziai.