Hamain Apni Masafat Be Maza Karna Nahi Hai

ہمیں اپنی مسافت بے مزہ کرنا نہیں ہے

ہمیں اپنی مسافت بے مزہ کرنا نہیں ہے

سفر کرنا ہے منزل کا پتہ کرنا نہیں ہے

بلا سے ہم کسی ساحل پہ پہنچیں یا نہ پہنچیں

کسی بھی ناخدا کو اب خدا کرنا نہیں ہے

ہواؤں سے ہی قائم ہے ہماری ضو فشانی

ہواؤں سے چراغوں کو جدا کرنا نہیں ہے

بدلتے وقت کے تیور پرکھنا چاہتے ہیں

کہا کس نے بزرگوں کا کہا کرنا نہیں ہے

تمہیں ضامن ہو میری زندگی کے میرے خوابو

تمہیں اک پل بھی آنکھوں سے رہا کرنا نہیں ہے

کئی آشفتہ سر مل جائیں گے رستے میں عالمؔ

کسی کے واسطے ہم کو صدا کرنا نہیں ہے

عالم خورشید

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(377) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Alam Khurshid, Hamain Apni Masafat Be Maza Karna Nahi Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 71 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Alam Khurshid.