Waqt Se Pehlay Darakhton Pay Samar Anay Lagey

وقت سے پہلے درختوں پہ ثمر آنے لگے

وقت سے پہلے درختوں پہ ثمر آنے لگے

رات آئی بھی نہیں خواب سحر آنے لگے

میں نے پہلا ہی قدم رکھا ہے دریا میں ابھی

خیر مقدم کے لئے کتنے بھنور آنے لگے

کیا خطا ہو گئی سرزد میں اسی سوچ میں ہوں

سنگ کے بدلے مری سمت گہر آنے لگے

اس لئے ظل الٰہی سے خفا ہیں راتیں

ان کے ایوان میں کیوں خاک بسر آنے لگے

آپ کچھ اور ہیں عاشق اسے کہتے ہیں میاں

جس کو ہر چیز میں محبوب نظر آنے لگے

خیر مانگیں کسی دشمن کے لئے اب عالمؔ

عین ممکن ہے دعاؤں میں اثر آنے لگے

عالم خورشید

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(402) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Alam Khurshid, Waqt Se Pehlay Darakhton Pay Samar Anay Lagey in Urdu. This famous Urdu Shayari is a , and the type of this Nazam is Urdu Poetry. Also there are 71 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Alam Khurshid.