Jabar Halat Ka To Naam Liya Hai Tum Nay

جبر حالات کا تو نام لیا ہے تم نے

جبر حالات کا تو نام لیا ہے تم نے

اپنے سر بھی کبھی الزام لیا ہے تم نے

مے کشی کے بھی کچھ آداب برتنا سیکھو

ہاتھ میں اپنے اگر جام لیا ہے تم نے

عمر گزری ہے اندھیرے کا ہی ماتم کرتے

اپنے شعلے سے بھی کچھ کام لیا ہے تم نے

ہم فقیروں سے ستائش کی تمنا کیسی

شہریاروں سے جو انعام لیا ہے تم نے

قرض بھی ان کے معانی کا ادا کرنا ہے

گرچہ لفظوں سے بڑا کام لیا ہے تم نے

ان اصولوں کے کبھی زخم بھی کھائے ہوتے

جن اصولوں کا بہت نام لیا ہے تم نے

لب پہ آتے ہیں بہت ذوق سفر کے نغمے

اور ہر گام پہ آرام لیا ہے تم نے

آل احمد سرور

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(440) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ale Ahmad Suroor, Jabar Halat Ka To Naam Liya Hai Tum Nay in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 61 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ale Ahmad Suroor.