Zanjeer Say Junoo Ki Khalish Kam Nah Ho Saki

زنجیر سے جنوں کی خلش کم نہ ہو سکی

زنجیر سے جنوں کی خلش کم نہ ہو سکی

بھڑکی اگر یہ آنچ تو مدھم نہ ہو سکی

بدلے بہار لالہ و گل نے ہزار رنگ

لیکن جمال دوست کا عالم نہ ہو سکی

کیا کیا غبار اٹھائے نظر کے فساد نے

انسانیت کی لو کبھی مدھم نہ ہو سکی

ہم لاکھ بد مزہ ہوئے جام حیات سے

جینے کی پیاس تھی کہ کبھی کم نہ ہو سکی

جو جھک گئی جبیں ترے نقش قدم کی سمت

تا زیست پھر وہ اور کہیں خم نہ ہو سکی

مجھ سے نہ پوچھ اپنی ہی تیغ ادا سے پوچھ

کیوں تیری چشم لطف بھی مرہم نہ ہو سکی

کتنے رموز شوق ان آنکھوں میں رہ گئے

جن سے نگاہ دوست بھی محرم نہ ہو سکی

موج نسیم اپنی بہاریں لٹا گئی

لیکن خزاں کی مردہ دلی کم نہ ہو سکی

اللہ رے اشتیاق نگاہ امید کا

کھوئے ہوؤں کی یاد میں پر نم نہ ہو سکی

گل کاریٔ نظر ہو کہ رنگ جمال دوست

کچھ بات تھی کہ زیست جہنم نہ ہو سکی

ان کی جبیں پہ خیر سے اک رنگ آ گیا

میری وفا اگرچہ مسلم نہ ہو سکی

اپنے ہی گھر کی خیر منائی تمام عمر

ہم سے سرورؔ فکر دوعالم نہ ہو سکی

آل احمد سرور

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(318) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ale Ahmad Suroor, Zanjeer Say Junoo Ki Khalish Kam Nah Ho Saki in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 49 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ale Ahmad Suroor.