Ab Gumaan Hai Na Yaqeen Kuch Bhi Nahi Kuch Bhi Nahi

اب گماں ہے نہ یقیں کچھ بھی نہیں کچھ بھی نہیں

اب گماں ہے نہ یقیں کچھ بھی نہیں کچھ بھی نہیں

آسماں کچھ بھی نہیں اور زمیں کچھ بھی نہیں

مٹ گیا دل سے عقیدت کا بھرم یعنی اب

اس کا در کچھ بھی نہیں اپنی جبیں کچھ بھی نہیں

کیوں نہ یک رنگئ حالات سے جی اکتائے

اب کوئی بزم طرب دور حزیں کچھ بھی نہیں

اب تو ہر حسن و نظر رنگ و مہک ساز و سخن

لاکھ اچھے ہوں مگر خود سے حسیں کچھ بھی نہیں

جانے کس طور ہے تقسیم کرم اللہ کا

ہے کہیں کتنا ہی کچھ اور کہیں کچھ بھی نہیں

آس بندھتی ہے ذرا دیر اسے تکنے میں

کون کہتا ہے سر عرش بریں کچھ بھی نہیں

آ ہی جائیں گے تہ دام اجل سب اک دن

ہو بھلے تخت نشیں خاک نشیں کچھ بھی نہیں

کتنا پر شور تھا انفاس کا بہتا دریا

کیوں یہ کہتا ہے دم باز پسیں کچھ بھی نہیں

مٹ گیا جسم ہوئی روح بھی رخصت کب کی

اب یہاں کوئی مکاں ہے نہ مکیں کچھ بھی نہیں

خود سے کس طور سہے شخص وہ دوری اپنی

ہے بجز اپنے امرؔ جس کے قریں کچھ بھی نہیں

امردیپ سنگھ

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(523) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Amardeep Singh, Ab Gumaan Hai Na Yaqeen Kuch Bhi Nahi Kuch Bhi Nahi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 10 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Amardeep Singh.