Iss Qadar Bhi Dil Nahi Tota Hua

اس قدر بھی دل نہیں ٹوٹا ہوا

اس قدر بھی دل نہیں ٹوٹا ہوا

کچھ سمٹ سکتا نہ ہو بکھرا ہوا

کب تلک خود کو یہی کہتا رہوں

دل پہ مت لے جو ہوا اچھا ہوا

کون سے منظر پہ ٹھہرے آنکھ بھی

سب نظر آتا ہے بس دیکھا ہوا

ہم یقیں کر کے اسے پڑھتے رہے

جو بھی تھا حرف گماں لکھا ہوا

سب مراسم رکھ گیا دہلیز پر

دل گرفتار انا ہوتا ہوا

جانے کس غم کو رہائی دے رہے

آنکھ میں جو اشک ہے آیا ہوا

وقت کتنے زور سے ہنسنے لگا

عشق جب شرطوں پہ آمادہ ہوا

ہائے ترک عشق پر اس کا یہ طنز

دیر ہی سے ہاں مگر اچھا ہوا

اب اسے یہ بھی نہیں ہے یاد تک

ہے وہ کس کس کو کہاں بھولا ہوا

وہ جسے کچھ بھی نہ ہوتا تھا اسے

بعد تیرے پوچھ مت کیا کیا ہوا

چل امرؔ اس شخص کو جا کر ملیں

وہ نہیں ملتا اگر تو کیا ہوا

امردیپ سنگھ

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(545) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Amardeep Singh, Iss Qadar Bhi Dil Nahi Tota Hua in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 10 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Amardeep Singh.