Huzoor Yaar Main Harf Iltija Ke Rakhay Thay

حضور یار میں حرف التجا کے رکھے تھے

حضور یار میں حرف التجا کے رکھے تھے

چراغ سامنے جیسے ہوا کے رکھے تھے

بس ایک اشک ندامت نے صاف کر ڈالے

وہ سب حساب جو ہم نے اٹھا کے رکھے تھے

سموم وقت نے لہجے کو زخم زخم کیا

وگرنہ ہم نے قرینے صبا کے رکھے تھے

بکھر رہے تھے سو ہم نے اٹھا لیے خود ہی

گلاب جو تری خاطر سجا کے رکھے تھے

ہوا کے پہلے ہی جھونکے سے ہار مان گئے

وہی چراغ جو ہم نے بچا کے رکھے تھے

تم ہی نے پاؤں نہ رکھا وگرنہ وصل کی شب

زمیں پہ ہم نے ستارے بچھا کے رکھے تھے

مٹا سکی نہ انہیں روز و شب کی بارش بھی

دلوں پہ نقش جو رنگ حنا کے رکھے تھے

حصول منزل دنیا کچھ ایسا کام نہ تھا

مگر جو راہ میں پتھر انا کے رکھے تھے

امجد اسلام امجد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(497) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Amjad Islam Amjad, Huzoor Yaar Main Harf Iltija Ke Rakhay Thay in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 164 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Amjad Islam Amjad.