Meri Basti Main Ju Kuch Sooraj Kabhi Utra Hota

میری بستی میں جو سورج کبھی اترا ہوتا

میری بستی میں جو سورج کبھی اترا ہوتا

میں بدن ہوتا ترا تو مرا سایہ ہوتا

کس کی بے مہر ادا سے ہمیں شکوہ ہوتا

ہم کسی کے نہ ہوئے کون ہمارا ہوتا

جان پر کھیل کے میں راہ وفا طے کرتا

اس کی جانب سے مگر کچھ تو اشارہ ہوتا

دل کا احسان ہے جو بجھ گیا خود ہی ورنہ

جانے میں کس کو کہاں ڈھونڈنے نکلا ہوتا

اس کو پانے کی تو حسرت ہے اسے پا کر بھی

کس کو معلوم ہے دل یوں ہی اکیلا ہوتا

دور سے کھینچتا رہتا ہے جو تصویر مری

کاش اس نے کبھی نزدیک سے دیکھا ہوتا

سن کے یاروں کے الم سوچتا رہتا ہوں کہ میں

کیسے جیتا جو ترا پیار بھی جھوٹا ہوتا

میرے عیبوں میں ہے شامل مری مجبوری بھی

میں بھی انسان نہ ہوتا تو فرشتہ ہوتا

تم نہ آئے کبھی نزدیک تو اچھا ہی کیا

لوگ ناداں ہیں یوں ہی شہر میں چرچا ہوتا

دنیا داری میں پڑے ہوتے جو تم بھی انجمؔ

دل بھی خوش رہتا سدا نام بھی اونچا ہوتا

انوار انجم

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(419) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Anwar Anjum, Meri Basti Main Ju Kuch Sooraj Kabhi Utra Hota in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 26 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Anwar Anjum.