Ehd E Hazir Aik Machine Or Iss Ka Karinda HooN Main

عہد حاضر اک مشین اور اس کا کارندہ ہوں میں

عہد حاضر اک مشین اور اس کا کارندہ ہوں میں

ریزہ ریزہ روح میری ہے مگر زندہ ہوں میں

میں ہوں وہ لمحہ جو مٹھی میں سما سکتا نہیں

پل میں ہوں امروز و ماضی پل میں آئندہ ہوں میں

وہ جو مجھ کو پھینک آئے بھیڑیوں کے سامنے

کیا گلہ شکوہ کہ ان سے آپ شرمندہ ہوں میں

میرے لفظوں میں اگر تاب و توانائی نہیں

اے خدا کیوں دہر میں تیرا نمائندہ ہوں میں

میں جو کہتا ہوں سمجھتا ہی نہیں کوئی اسے

جیسے ملبے میں دبی بستی کا باشندہ ہوں میں

میرے چہرے پر منقش اس طرح تاریخ ہے

جیسے اک کہنہ عجائب گھر کا باشندہ ہوں میں

خاک ہوں لیکن سراپا نور ہے میرا وجود

اس زمیں پر چاند سورج کا نمائندہ ہوں میں

اس جہاں میں میں ہی مسجود ملائک تھا سدیدؔ

اس جہاں میں آج کے انساں سے شرمندہ ہوں میں

انور سدید

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(396) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Anwar Sadeed, Ehd E Hazir Aik Machine Or Iss Ka Karinda HooN Main in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 22 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Anwar Sadeed.