Had Nazar Se Mera Asmaan Hai Poshida

حد نظر سے مرا آسماں ہے پوشیدہ

حد نظر سے مرا آسماں ہے پوشیدہ

خیال و خواب میں لپٹا جہاں ہے پوشیدہ

چلا میں جانب منزل تو یہ ہوا معلوم

یقیں گمان میں گم ہے گماں ہے پوشیدہ

پلک پہ آ کے ستارے نے داستاں کہہ دی

جو دل میں آگ ہے اس کا دھواں ہے پوشیدہ

افق سے تا بہ افق ہے سراب پھیلا ہوا

اور اس سراب میں سارا جہاں ہے پوشیدہ

ستارہ کیا مجھے افلاک کی خبر دے گا؟

نظر سے اس کی تو میرا جہاں ہے پوشیدہ

تو خود ہے خوار و زبوں حرص و آز دنیا میں

کھلے گا تجھ پہ کہاں جو جہاں ہے پوشیدہ

میں آنکھ کھول کے تکتا ہوں دور تک انورؔ

کہ ڈھونڈ لوں جو مرا آشیاں ہے پوشیدہ

انور سدید

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(470) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Anwar Sadeed, Had Nazar Se Mera Asmaan Hai Poshida in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 22 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Anwar Sadeed.