Safeesa Ley Gaye Mojoon Ki Garam Joshi Main

سفینہ لے گئے موجوں کی گرم جوشی میں

سفینہ لے گئے موجوں کی گرم جوشی میں

ہزیمت آئی نظر جب کنارا کوشی میں

نشہ چڑھا تو زباں پر نہ اختیار رہا

وہ منکشف ہوئے خود اپنی بادہ نوشی میں

بنا لیا اسے ثانی پھر اپنی فطرت کا

سکوں جو ملنے لگا ان کو زہر نوشی میں

قبول رب کریم و رحیم نے کر لی

مری زباں پہ جو آئی دعا خموشی میں

کھلی زبان تو ظرف ان کا ہو گیا ظاہر

ہزار بھید چھپا رکھے تھے خموشی میں

پسند کی نہ زمانے نے سادگی میری

بھرم رکھا ہے خدا نے سفید پوشی میں

زد عتاب میں ان کے جو آ گئے انورؔ

نہ جانے کہہ گئے کیا کیا وہ گرم جوشی میں

انور سدید

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(425) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Anwar Sadeed, Safeesa Ley Gaye Mojoon Ki Garam Joshi Main in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 22 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Anwar Sadeed.