Hatheliyon Main Hai Zameen

ہتھیلیوں میں ہے زمیں

اب ان برگ ریزاں درختوں پہ

نوخیز کونپل نہیں کھل سکے گی

نہ ہی اوس زرتار پھولوں سے اب مل سکے گی

نہ ہی آسمانوں کی رنگت شہابی

نہ چھیڑا کسی نے رباب سحابی

ترستی سماعت میں

کوئی بھی آواز آتی نہیں آسماں سے

ہم اجسام آبی و خاکی بھی

جولان گاہ جہاں میں

تہی حس تحرک سے عاری

کہاں تک جئیں اب

کسی برگ وساز حیات آفریں کا

کہاں سے پتا لیں؟

مگر ہاں ،چلو کیسہ جاں سے

وحشت سے معمور لمحے نکالیں

ہتھیلی میں اپنی سمیٹیں زمیں

آسماں اپنے تن سے لگا لیں

سمندر کی کھینچیں طنابیں

قدم پانیوں پر دھریں

اجنبی سرزمینوں کے

سب دائرے پار کرلیں

پہاڑوں کی میخیں اکھیڑیں

سبک بار کرلیں زمیں

کہکشاوں میں

دنیا بسا لیں!

عارفہ شہزاد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(2208) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Arifa Shahzad, Hatheliyon Main Hai Zameen in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Funny, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 63 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Funny, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Arifa Shahzad.