Ghazal Main Jaan Pari Guftago Main Phool Khilley

غزل میں جان پڑی گفتگو میں پھول کھلے

غزل میں جان پڑی گفتگو میں پھول کھلے

مری نوا سے دیار نمو میں پھول کھلے

مرے ہی شعر اچھالے مرے حریفوں نے

مرے طفیل زبان عدو میں پھول کھلے

انہیں یہ زعم کہ بے سود ہے صدائے سخن

ہمیں یہ ضد کہ اسی ہاؤ ہو میں پھول کھلے

یہ کس کو یاد کیا روح کی ضرورت نے

یہ کس کے نام سے میرے لہو میں پھول کھلے

بہار اب کے نہ ٹھہری کسی بھی قریے میں

نہ باغ خواب نہ صحرائے ہو میں پھول کھلے

زمین کوفہ کو یوں ہی خراب رہنا تھا

تو کس لیے یہ سنان و گلو میں پھول کھلے

مرے جنوں سے پس دشت جاں غبار اٹھا

مرے لہو سے در روبرو میں پھول کھلے

کبھی کمند کوئی موج ڈال دے ارشدؔ

کبھی ہوائے سر آب جو میں پھول کھلے

ارشد عبدالحمید

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(411) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Arshad Abdul Hamid, Ghazal Main Jaan Pari Guftago Main Phool Khilley in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 37 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Arshad Abdul Hamid.