Tamam Sheher Ki Ankhoon Ka Mahtaab Hua

تمام شہر کی آنکھوں کا ماہتاب ہوا

تمام شہر کی آنکھوں کا ماہتاب ہوا

میں جب سے اس کی نگاہوں میں انتخاب ہوا

ہوا کے کاندھوں نے پہنچایا آسمانوں تک

میں برگ سبز تھا سوکھا تو آفتاب ہوا

پلٹ کے دیکھوں تو مجھ کو سزائیں دیتا ہے

عجب ستارہ رہ غم میں ہم رکاب ہوا

یوں قوس چشم میں آیا وہ بارشوں کی طرح

کہ حرف دید کئی رنگوں کی کتاب ہوا

پگھل کے آ گئی ساری اداسی لفظوں میں

وفور غم مرے آئینے میں حباب ہوا

میں اپنی خواہشیں گم کر کے مل گیا اس کو

خوشا وہ میری محبت میں کامیاب ہوا

ارشد عبدالحمید

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(391) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Arshad Abdul Hamid, Tamam Sheher Ki Ankhoon Ka Mahtaab Hua in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 37 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Arshad Abdul Hamid.