Kahin Tu Phenk Hi Dain Ge Yeh Bar Sansoon Ka

کہیں تو پھینک ہی دیں گے یہ بار سانسوں کا

کہیں تو پھینک ہی دیں گے یہ بار سانسوں کا

اٹھائے بوجھ جو پھرتے ہیں یار سانسوں کا

انا غرور تکبر حیات کچھ بھی نہیں

کہ سارا کھیل ہے پیارے یہ چار سانسوں کا

چلو یہ زندگی زندہ دلی سے جیتے ہیں

بڑھے گا اس طرح کچھ تو وقار سانسوں کا

گلابی ہونٹ وہ ہونٹوں پہ رکھ کے کہتی تھی

سدا رہے گا یہ تجھ پر خمار سانسوں کا

بڑے قریب سے گزری ہے موت چھو کے تجھے

جو ہو سکے کوئی صدقہ اتار سانسوں کا

ہوا یہ وجد میں آ کر دیے سے کہنے لگی

کہ اب تو سہہ نہیں پائے گا وار سانسوں کا

ہم اس کو زندگی سمجھیں تو کس طرح ارشدؔ

کسی کے ہاتھ میں ہے اختیار سانسوں کا

ارشد محمود ارشد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(517) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Arshad Mahmood Arshad, Kahin Tu Phenk Hi Dain Ge Yeh Bar Sansoon Ka in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 13 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Arshad Mahmood Arshad.