Katte Hi Dor Saans Ki Naam O Namood Khaak

کٹتے ہی ڈور سانس کی نام و نمود خاک

کٹتے ہی ڈور سانس کی نام و نمود خاک

ہونا ہے ایک روز یہ قصر وجود خاک

ٹوٹا کسی کا دل جو گرا دوسری طرف

میزان میں پڑا ترا رخت سجود خاک

تجسیم کر رہا ہے وہ دست کمال سے

آتش پرست دہریے مسلم ہنود خاک

اس محفل طرب میں نہیں چاشنی کوئی

دل میں رمق نہ ہو اگر بزم سرود خاک

بڑھنے لگے ہیں چار سو رسموں کے دائرے

ٹھوکر لگا کے پاؤں کی کر دوں قیود خاک

یہ قوم ان ہی راستوں پہ چل پڑی ہے پھر

جن پر ہوئیں تھیں ایک دن عاد و ثمود خاک

سینے میں کوئی آگ ہے ارشدؔ لگی ہوئی

ورنہ ہماری آنکھ سے اٹھتا یہ دود خاک

ارشد محمود ارشد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(593) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Arshad Mahmood Arshad, Katte Hi Dor Saans Ki Naam O Namood Khaak in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 13 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Arshad Mahmood Arshad.