بند کریں
شاعری مضامینانتخاب ادب نامہ کی طرف سے شاہین عباس کی شاعری سے انتخاب

انتخاب کے مزید مضامین

پچھلے مضامین - مزید مضامین
ادب نامہ کی طرف سے شاہین عباس کی شاعری سے انتخاب
پیدائش 29 نومبر 1965 ۔ شیخوپورہ سے تعلق رکھنے والے نہایت خوبصورت اور منفرد لب و لہجے کے مالک اور جدید شاعری میں ایک اہم مقام رکھنے والے ممتاز شاعر۔ نوے کی دہائی میں انجینئرنگ یونیورسٹی لاہور سے الیکڑیکل انجینئرنگ کی۔ آج کل اورینٹ آپریٹنگ کمپنی میں اپنے عہدے کے فرائض انجام دے رہے ہیں۔ ادبی سرگرمیوں اور مشاعروں میں بھی پیش پیش رہتے ہیں

پیدائش 29 نومبر 1965 ۔ شیخوپورہ سے تعلق رکھنے والے نہایت خوبصورت اور منفرد لب و لہجے کے مالک اور جدید شاعری میں ایک اہم مقام رکھنے والے ممتاز شاعر۔ نوے کی دہائی میں انجینئرنگ یونیورسٹی لاہور سے الیکڑیکل انجینئرنگ کی۔ آج کل اورینٹ آپریٹنگ کمپنی میں اپنے عہدے کے فرائض انجام دے رہے ہیں۔ ادبی سرگرمیوں اور مشاعروں میں بھی پیش پیش رہتے ہیں۔ درس دھارا () لاہور،کاغذی پیرہن ، 2014ء ، خدا کے دن (2009ء)، وابستہ (2002ء)، تحیئر (1998ء)شاعری، خواب میرا لباس (1992ء) اب تک منظر۔ عام ہر آ چکے ہیں۔ نظم و غزل کے علاوہ آپ آجکل افسانے بھی لکھ رہے ہیں جو جلد ہی ایک کتاب کی شکل میں منظر۔ عام ہر آئیں گے۔
ان کے کلام سے کچھ اشعار احباب کی محبتوں کی نظر

اک نقش ہو نہ پائے اِدھر سے اُدھر مرا
جیسا تمھیں ملا تھا میں ویسا جدا کرو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اپنی نشست چھوڑ کے واں رکھ دیا چراغ
میں نے زمین دے کے بچا لی ہے روشنی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہمیں توآتے جاتے ہی ملا ہے جب بھی دیکھا ہے
یہ روزانہ کا جھونکا کیا پتہ کتنا پرانا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں ایک گھر میں بٹا رہ گیا اور آخر کار
وہی ھوا نا ، کہ گھر گھر دکھائی دینے لگا
وہ اس طرح سے مجھے دیکھتے ہوئے گزرا
میں اپنے آپ کو بہتر دکھائی دینے لگا
کچھ اتنے غور سے دیکھا چراغ جلتا ہوا
کہ میں چراغ کے اندر دکھائی دینے لگا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک لکیر شام کی، کہتی تھی درمیاں کی بات
خلقِ خدا کا ایک دن، باقی ہیں سب خدا کے دن
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تو کیا اس راز سے سینہ چھڑا لیں, سانس لے لیں!
ہم اس تصویر میں,تصویر سے تنگ آگئے ہیں
مچانوں میں سے آنسو گر رہے ہیں خاک اوپر
شکاری ہیں کہ جو تقدیر سے تنگ آگئے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تھا' مگر ایسا اکیلا میں کہاں تھا پہلے۔۔،
میری تنہائی مکمل تیرے آنے سے ہوئی۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی مکاں ہے جو بے دخل کر رہا ہے مجھے
کوئی گلی ہے کہ جس سے نکلتا جاتا ہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شہر میں داخلے کی شرط ، جسم نہیں تھا ، روح تھی
جسم کا جسم رکھ دیا ،سر سے کہیں اتار کر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پہلے تو مٹی کا اور پانی کا اندازہ ہوا
پھر کہیں اپنی پریشانی کا اندازہ ہوا
عمر بھر ہم نے فنا کے تجربے خو د پر کئے
عمر بھر میں عالمِ فانی کا اندازہ ہوا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم نے کیا بات کاٹ دی تھی مری
گھر میں آتا رہا گلی کا شور
سننے والوں میں اِتنا پردہ ہے
کوئی سنتا نہیں کسی کا شور
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب سلامت نہیں ملتے مجھے تاریخ کے لوگ
اتنے ٹکڑے مرے ہاتھوں سے روایت کے ہوئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شامِ شور انگیز یہ سب کیا ہے بے حد و حساب
اتنی آوازیں نہیں دنیا میں جتنا شور ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری آنکھوں کا تسلسل تری آنکھیں ہی نہ ہوں
تیری آنکھوں میں بھی روتا نظر آیا ہے کو ئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رات کے ٹوٹتے تاروں میں ہمیں رکھا گیا
ہمیں پرکھا گیا گرتے ہوئے معیاروں پر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گھر کہیں بھی نہیں ، کوئی بھی نہیں
سب گلی کا گمان ہے سائیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آخر در و دیوار کے آنسو نکل آئے
ہم کو نظر آ تی ہی نہ تھی گھر کی اداسی
میں سیڑھیاں چڑھتا چلا جاتا ہوں کہ جالوں
اوپر کی وہ تنہائی ، وہ اوپر کی اداسی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حاشیے کے دونوں جانب نام ہیں ، اور صرف نام
یہ جو خالی ہے جگہ ، یہ بھی کسی کا نام ہے
یہ جو ہم کچھ کہتے کہتے کچھ بھی کہ پاتے نہیں
زندگی شاید اِسی پیغمبری کا نام ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی تو بات ہے کہ دن آج بھی ختم ہو گیا
یوں ہی یہ رات ہے رواں ، پھر بھی رواں یونہی نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سمتوں کا اِس قدر خیال ؟ سمتوں کا اِس قدر ملال؟
چاروں کے بیچ بیٹھ کر ، چاروں کا غم کیا گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک شکن وصال کی ، ایک شکن فراق کی
سِلوٹیں پڑ گئیں ہیں دو ، جامہ ءدستیاب میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خاموش تجھے دیکھ کے خاموش ہوا ہوں
آخر کو تو ہونی تھی یہ تکرار کسی دن
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب جو گھر اِن پہ گرا ہے تو کُھلے ہیں ، ورنہ
یہ مکیں ، لگتا نہیں تھا ، کہ مکاں والے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پانی پہ مذاق بن گئے ہم
کشتی میں نہ تھی جگہ ہماری
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
انگلیوں پر پھول گن گن کر یہ نوبت آ گئی
اپنی پوروں کو بھی اب پھولوں میں گن جاتا ہوں میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کچھ اضافہ کیا ہے کچھ ترمیم
خود کو اک واقعہ بنا دیا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہمیں جا جا کے کہنا پڑتا تھا ہم ہیں یہیں ہیں
کہ جب موجودگی، موجودگی ہوتی نہیں تھی
تمہی کو ہم بسر کرتے تھے اور دن ماپتے تھے
ہمارا وقت اچھا تھا گھڑی ہوتی نہیں تھی
دیا پہنچا نہیں تھا آگ پہنچی تھی گھروں تک
پھر ایسی آگ جس سے روشنی ہوتی نہیں تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے کھو کر تری آنکھیں نہیں پہلے جیسی
تیرے نقصان سے بڑھ کر ہے یہ نقصان مرا
میری چپ شور بنی، شور سے کچھ اور بنی
ایک اک کر کے ہوا ختم ہر امکان مرا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آنکھیں تمہارے ہاتھ پہ رکھ کر میں چل دیا
اب تم پہ منحصر ہے کہ کب دیکھتا ہوں میں
ناکامِ عشق ہوں ____ سو مرا دیکھنا بھی دیکھ
کم دیکھتا ہوں ___ اور غضب دیکھتا ہوں میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آتشِ غم پہ نظر کی ہے کچھ ایسے کہ یہ آنچ
بات کر سکتی ہے اب میرے برابر آکر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آخری فتح خاموشی کی ہوئی
اور آواز فنا ہو گئی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شہر کا ماجرا نہ پوچھ، شہر تو یوں ہوا کہ بس!
گھر میں کوئی گلی ہوئی، جیسے گلی میں گھر ہوا
ہم تھے کہ رات دن کے داغ ، جیسے صدی صدی کے باغ
یعنی گزرتے وقت کا ، ہم پہ بہت اثر ہوا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سرسری گزرے تھے جو ہجر کی وحشت سے وہ لوگ
حاضر اِس باب میں ممکن ہے دوبارہ کیے جائیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جو خواب اپنے اپنے نہیں دیکھتے تھے
اب آنکھیں تو دیکھیں ذرا اپنی اپنی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عشق میں دوہری مشقت کی ہے
حالتِ ہجر میں ہجرت کی ہے
میرے کچھ اشک تہہ دل میں بھی تھے
جانچنے والوں نے عُجلت کی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب ضروری نہیں، ہاتھوں سے جلائیں یہ چراغ
یہ بھی کافی ہے کہ آنکھوں سے اشارہ کیے جائیں
ایک وقت ایسا بھی ہو وقت ملانے والے
خواب سب تیرے ہوں اور کام ہمارا کیے جائیں
آخری عشق کی حالت ہو تو یہ ہوتا ہے
کوئ منظر بھی نہ ہو اور نظارہ کیے جائیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عشق اُس وقت کی دولت ہے مرے پاس کہ جب
فیصلے ہوتے تھے تقدیر کی نگرانی میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ لوگ ڈوبتے دن کی مثال لاتے رہے
تب ایک شام مرا ڈوبنا مثال ہوا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ تو ہم نے کہا کہ تم بھی ہو
ورنہ کوِئی نظام تھا ہی نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چائے کی پیالی میں تصویر وہی ہے کہ جو تھی
یوں چلے جانے سے مہمان کہاں جاتا ہے
بات یونہی تو نہیں کرتا ہوں میں رک رک کر
کیا بتاؤں کہ مرا دھیان کہاں جاتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہمیں اس عالم۔ ہجراں میں بھی رک رک کے چلنا ہے
انہیں جانے دیا جائے جنہیں عجلت زیادہ ہے
یہ دل باہر دھڑکتا ہے یہ آنکھ اندر کو کھلتی ہے
ہم ایسے مرحلے میں ہیں جہاں زحمت زیادہ ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دیوار کو گرا کے اُٹھایا بھی میں نے تھا
دیوار نے گرا کے اٹھایا نہیں مجھے
میرا یہ کام اور کسی کے سپرد ہے
خود خواب دیکھنا ابھی آیا نہیں مجھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شاہین عباس

(0) ووٹ وصول ہوئے

: مضامین سےمتعلقہ شعراء