بند کریں
شاعری مضامینانتخاب فراق گورکھپوری

انتخاب کے مزید مضامین

- مزید مضامین
فراق گورکھپوری
ان کے متعدد شاعری مجموعے شائع ہوئے جن میں روح کائنات، شبنمستان، رمز و کنایات، غزلستان، روپ، مشعل اور گلِ نغمہ کے نام سرفہرست ہیں۔ حکومت ہند نے انہیں پدما بھوشن اور جنانپتھ کے اعزازات عطا کیے تھے۔

آج معروف شاعر رگھوپتی سہائے فراقؔ گورکھپوری کی سالگرہ ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رگھوپتی سہائے فراقؔ گورکھپوری

فراق گورکھپوری 28 اگست 1896ء بروز جمعہ دن بارہ بجے گورکھپور شہر میں پیدا ہوۓ۔ان کے والد منشی پرشاد عبرتؔ بھی بہت بڑے شاعر تھے ۔ان کے والد نے تین شادیاں کی تھیں فراق گورکھپوری کی والدہ ان کے والد کی تیسری بیوی تھیں ۔ان کے 5 بھائی اور 3 بہنیں تھیں۔فراق گورکھپوری بچپن سے ہی بہت ذہین تھے۔1913ء میں گورنمنٹ جوبلی ہائی سکول گرکھپور سے سیکنڈ ڈویژن میں اسکول لیونگ سرٹیفیکیت کا امتحان پاس کیا۔اور میور سنٹرل کالج الٰہ آباد سے ایف اے میں داخلہ لیا اسی دوران میں انہیں اور ان کے خاندان کو دھوکہ دے کر ایک صاحب نے ان کی شادی ایک ایسی لڑکی سے کرا دی کہ ان کی زندگی ایک ناقبال برداشت عذاب بن گئی۔ان کی بیوی میں کوئی اخلاقی عیب تو نہیں تھا لیکن معمولی سے معمولی انسان سے بھی کند ذہن اور نااہل تھی صورت میں بھی کوئی کشش نہیں تھی ۔بقول فراق گورکھپوری کے وہ منحوسیت لے کے میرے گھر آئی تھی۔مگر اس کے باوجود انہوں نے دوسری شادی نہیں کی۔ان کی زندگی ایک ناقابل برداشت تکلیف اور تنہائی کا شکار رہی۔اس گلہ گھونٹ دینے والی حالت میں بھی انہوں نے ایف اے میں صوبے بھر میں ساتویں پوزیشن حاصلی کی۔17 18 سال کی عمر میں ہی انہیں انگریزی زبان پر عبورحاصل تھا۔ایف اے پاس کرنے کے بعد انہوں نے بی اے میں داخلہ لیا۔مگر شادی کے غم کی وجہ سے انہیں پورے سال نیند نہیں آئی جس کی وجہ سے ان کی بینائی کمزور ہو گئی اور بہت بیمار ہو گۓ پھر علاج معالجے کے بعد ان کی طبیعت سنبھل گئی۔بی اے کا امتحان پاس کر کے جب یہ الٰہ آباد پہنچے تو والد کو بہت بیار پایا۔اس بیاری کی وجہ سے ان کے والد کی وفات 18 جون 1918ء کی شام ہوئی۔اس حادثے کے کئی برس بعد ان کی شاعری شروع ہوئی۔باپ کا کریا کرم کرا کر پس مانگان کو لے کر گورکھپور آ گۓ تھے۔والد کی وفات کے بعد گھر کی ذمہ داری ن پہ آ پڑی انہوں نے زمین وغیرہ بیچی اور 30 ہزار کا قرضہ جو والد کا تھا چکایا اسی دوران انہیں انگریز سرکار میں بطور ڈپٹی کلکٹر نوکری مل گئی۔مگر تھوڑے عرصے بعد ہی انہوں نے ذہنی،دلی کرب اور ازدواجی زندگی سے بیزاری کی وجہ سے استعفٰی دے کر مہاتما گاندھی کی رہبری میں جنگ آزادی میں شرکت کی۔
اسی دک بھرے زمانے میں دل کو جھوٹی تسلی دینے کے لۓ اور غم بھلانے کے لۓ شاعری شروع کی۔ان دنوں ان کی دوستی مجنونؔ گورکھپوری اور منشی پریمؔ چند سے ہوئی۔مہینے دو مہینے بعد غزل کہنے لگے۔ابھی ان کی شاعری شروع ہوۓ چند ماہ ہی ہوۓ تھے کہ انہوں نے یہ شعر کہا۔
دل دکھے روۓ ہیں شاید اس جگہ اے کوۓ یار
خاک کا اتنا چمک جانا ذرا دشوار تھا۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسی زمانے میں ان کے بڑے بھائی گنپت سہالے کا تپ دق کی وجہ سے انتقال ہو گیا۔ان کی موت کا منظر انہوں نے اس شعر میں باندھا
کسی کے صبر نے بے صبر کر دیا سب کو
فراقؔ نزع میں کروٹ کوئی بدلتا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شہنشاہ جارج پنجم کے ولی عہد پرنس آف ویلس 1920ء میں ہندوستان کا دورہ کرنے آۓ گاندھی کی قیادت میں ان کے دورے کا ملک بھر میں بائیکاٹ کیا گیا۔کانگریس کے تمام لیڈر گرفتار کر لۓ گۓ۔پنڈت جوایر لال نہرو جب گرفتار ہوۓ تو پورے صوبے کا ڈکٹیٹر گھور کپوری کو مقرر کر گۓ۔نشست کی صدارت مولانا حسرتؔ موہانی کے پاس تھی۔جب پنڈت جواہر لال نہرو نے یہ اعلان سنایا تھا تو فراقؔ گورکھپوری نے کھڑے ہو کر اعلان کیا تھا پورے صوبے کی ڈکٹیٹر سے میں رفیع احمد قدوائی کے حق میں دستبردار ہوتا ہوں۔اسی نشست میں تقریباۤ سو لوگ شریک تھے سب کو گرفتار کر لیا گیا۔یہ واقعہ 6 دسمبر 1920ء کا ہے 13 دسمبر 1920ء کو جیل ہی میں مقدمے کی ایک فرضی کاروائی کے بعد فیصلہ سنایا گیا اور ڈیڑھ برس قید سخت اور سو روپیہ جرمانہ کی سزا ملی۔تقریبآ ایک سال دو ماہ سزا کاٹنے کے بعد لکھنو سے گورکھپور آ گۓ۔لیکن رہائی سے کچھ پہلے ہی ان کے چھوٹے بھائی ترپراری سرن کی موت بھی تپ دق سے ہو چکی تھی۔جانکاہ سانھے پر رہائی کے کچھ دنوں بعد ہی انہوں نے بھائی کا ایک مختصر مرثیہ کہا۔
گھاٹ پر جلنے جلانے کے ہیں ساماں ہاۓ ہاۓ
کس قدر خاموش ہے شہر خموشاں ہاۓ ہاۓ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک نازک اور درد ناک المیہ ان کی نفسیاتی زندگی کا یہ رہا کہ ازدواجی زندگی کا غم زہر کی طرح ان کی رگ رگ۔باپ کا مرنا۔دو دو جوان بھائیوں کا مرنا۔جوان بیٹی کا مرنا۔ایک بد نصیب خبط الحواس بیٹے کی زندگی اور عین جوانی میں اس کی خودکشی یا کسی بھی دوسرے غم انگیز واقعے سے بھرپور انداز میں کھل کر متاثر ہونے کی صلاحیت ان میں باقی نہیں رہی تھی۔
انہوں نے اپنا تخلص فراقؔ ایک رسالے میں ناصر علی فراقؔ کا نام پڑھ کے رکھا یہ تخلص انہیں بہت پسند آیا ۔اور اسی نسبت سے اپنا تخلص فراقؔ رکھا اسی رسالے میں انہوں نے فانیؔ بدایونی کی مشہور غزل پڑھی جس کا شعر یہ تھا۔
اک معمہ ہے سمجھنے کا نہ سمجھانے کا
زندگی کا ہے کو ہے خواب ہے دیوانے کا
اس سے متاثر ہو کر انہوں نے غزل کہنی شروع کی جس کا مطلع یہ ہے
نہ سمجھنے کی یہ باتیں ہیں نہ سمجھانے کی
زندگی اچٹتی ہوئی نیند ہے دیوانے کی
نو دس بجے رات سے شروع ہو کر یہ غزل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہوتی رہی اور جب مقطع پر آنے والے تھے کہ رات کٹ گئی اور پو پھٹنے لگی اور پو پھوٹتے ہی یہ مقطع کہا
اجلے اجلے سے کفن میں سحر ہجر فراقؔ
ایک تصویر ہوں میں رات کے کٹ جانیکی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک زمانے میں جبکہ ان کی شاعری ابھی ابتدائی دور میں تھی ایک مشاعرے میں ان کے جاننے والے شرکت کے لۓ ساتھ لے گۓ ۔طرحی مشاعرے میں طرح تھی " زمانے میں،نشانے میں" جو غزل انہوں نے اس مشاعرے کہی وہ شاید ان کی انیسیویں یا بیسویں غزل تھی لیکن ایک شعر ایسا کہا جو عمر بھر کی مشق کے بعد بھی بڑے بڑے شاعر شاید ہی کہہ سکیں۔وہ شعر یہ ہے
غرض کہ کاٹ دیۓ زندگی کے دن اے دوست
وہ تیری یاد میں ہوں یا تجھے بھلانے میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ان کے متعدد شاعری مجموعے شائع ہوئے جن میں روح کائنات، شبنمستان، رمز و کنایات، غزلستان، روپ، مشعل اور گلِ نغمہ کے نام سرفہرست ہیں۔ حکومت ہند نے انہیں پدما بھوشن اور جنانپتھ کے اعزازات عطا کیے تھے۔

3 مارچ 1982ء کو فراق گورکھپوری طویل علالت کے بعد نئی دہلی میں انتقال کر گئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چند منتخب ضرب المثل اشعار
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
طبیعت اپنی گھبراتی ہے جب سنسان راتوں میں
ہم ایسے میں تری یادوں کے چادر تان لیتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک مدت سے تری یاد بھی آئی نہ ہمیں
اور ہم بھول گۓ ہوں تجھے،ایسا بھی نہیں ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
غرض کے کاٹ دیے زندگی دن اے دوست!
وہ تیری یاد میں ہوں یا تجھے بھلانے میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب یاد رفتگاں کی بھی ہمت نہیں رہی
یاروں نے کتنی دور بسائی ہیں بستیاں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ذرا وصال کے بعد آئینہ تو دیکھ اے دوست!
ترے جمال کی دوشیزگی نکھر آئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس دور میں زندگی بشر کی
بیمار کی رات ہو گئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہے رفتار انقلاب فراقؔ
کتنی آہستہ اور کتنی تیز!
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کہاں ہر ایک سے انسانیت کا بار اٹھا
کہ یہ بلا بھی ترے عاشقوں کے سر آئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

منتخب کلام
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل کا ساز اُٹھاؤ بڑی اُداس ہے رات
نوائے میر سناؤ بڑی اُداس ہے رات

کہیں نہ تم سے تو پھراور کس سے جا کےکہیں
سیاہ زلف کے سایوں بڑی اُداس ہے رات

سنا ہے پہلے بھی ایسے میں بجھ گئے ہیں چراغ
دلوں کی خیر مناؤ بڑی اُداس ہے رات

دیئے رہو یونہی کچھ دیر اور ہاتھ میں ہاتھ
ابھی نہ پاس سے جاؤ بڑی اداس ہے رات
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بہت پہلے سے ان قدموں کی آہٹ جان لیتے ہیں
تجھے اے زندگی ہم دور سے پہچان لیتے ہیں

طبیعت اپنی گھبراتی ہے جب سنسان راتوں میں
ہم ایسے میں تری یادوں کی چادر تان لیتے ہیں

فراق اکثر بدل کر بھیس ملتا ہے کوئی کافر
کبھی ہم جان لیتے ہیں کبھی پہچان لیتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شامِ غم کچھ اُس نگاہِ ناز کی باتیں کرو
بےخودی بڑھتی چلی ہے، راز کی باتیں کرو

یہ سکوتِ ناز، یہ دل کی رگوں کا ٹُوٹنا
خامشی میں کچھ شکستِ ساز کی باتیں کرو

نکہتِ زلفِ پریشاں، داستانِ شامِ غم
صبح ہونے تک اِسی انداز کی باتیں کرو

جو عدم کی جان ہے، جو ہے پیامِ زندگی
اُس سکوتِ راز، اُس آواز کی باتیں کرو

جس کی فُرقت نے پلٹ دی عشق کی کایا فراق
آج اس عیسیٰ نفس دم ساز کی باتیں کرو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مدتیں گزریں تری یاد بھی آئی نہ ہمیں
اور ہم بھول گئے ہوں تجھے ایسا بھی نہیں

آہ یہ مجمع احباب یہ بزمِ خاموشی
آج محفل میں فراقِ سخن آراء بھی نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رات بھی نیند بھی کہانی بھی
ہائے کیا چیز ہے جوانی بھی

ایک پیغامِ زندگانی بھی
عاشقی مرگِ ناگہانی بھی

اس ادا کا تری جواب نہیں
مہربانی بھی سرگرانی بھی

دل کو اپنے بھی غم تھے دنیا میں
کچھ بلائیں تھیں آسمانی بھی

منصبِ دل خوشی لٹاتا ہے
غمِ پنہاں بھی پاسبانی بھی

دل کو شعلوں سے کرتی ہے سیراب
زندگی آگ بھی ہے پانی بھی

لاکھ حسنِ یقیں سے بڑھ کر ہے
ان نگاہوں کی بد گمانی بھی

تنگنائے دلِ ملال میں ہے
بحرِ ہستی کی بے کرانی بھی

عشقِ ناکام کی ہے پرچھائی
شادمانی بھی کامرانی بھی

دیکھ! دل کے نگار خانے میں
زخمِ پنہاں کی ہے نشانی بھی

خلق کیا کیا مجھے نہیں کہتی
کچھ سنوں میں، تری زبانی بھی

آئے تاریخِ عشق میں سو بار
موت کے دور درمیانی بھی

اپنی معصومیوں کے پردے میں
ہو گئی وہ نظر سیانی بھی

دن کو سورج مُکھی ہے وہ نو گُل
رات کو وہ ہے رات رانی بھی

دلِ بد نام تیرے بارے میں
لوگ کہتے ہیں اک کہانی بھی

نظم کرتے کوئی نئی دنیا
کہ یہ دنیا ہوئی پرانی بھی

دل کو آدابِ بندگی بھی نہ آئے
کر گئے لوگ حکمرانی بھی

جورِ کم کم کا شکریہ بس ہے
آپ کی اتنی مہربانی بھی

دل میں اک ہوک بھی اٹھی اے دوست
یاد آئی تری جوانی بھی

سر سے پا تک سپردگی کی ادا
ایک اندازِ ترکمانی بھی

پاس رہنا کسی کا رات کی رات
میہمانی بھی میزبانی بھی

جو نہ عکسِ جبینِ ناز کی ہے
دل میں اک نورِ کہکشانی بھی

زندگی عین دیدِ یار فراق
زندگی ہجر کی کہانی بھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کچھ مضطرب سی عشق کی دنیا ہے آج تک
جیسے کہ حسن کو نہیں دیکھا ہے آج تک

بس اِک جھلک دکھا کے جسے تو گزر گیا
وہ چشمِ شوق محوِ تماشا ہے آج تک

یوں تو اداس غمکدہء عشق ہے مگر
اس گھر میں اِک چراغ سا جلتا ہے آج تک

جس کے خلوصِ عشق کے افسانے بن گئے
تجھ کو اُسی سے رنجشِ بے جا ہے آج تک

پرچھائیاں نشاط و الم کی ہیں درمیاں
یعنی وصال و ہجر کا پردا ہے آج تک

ویرانیاں جہان کی آباد ہوچکیں
جز اِک دیارِ عشق کہ سُونا ہے آج تک

ساری دلوں میں ہیں غمِ پنہاں کی کاوشیں
جاری کشاکشِ غم دنیا ہے آج تک

ہم بیخودانِ عشق بہت شادماں سہی
لیکن دلوں میں درد سا اُٹھتا ہے آج تک

پورا بھی ہوکے جو کبھی پورا نہ ہوسکا
تیری نگاہ کا وہ تقاضا ہے آج تک

تُو نے کبھی کیا تھا جدائی کا تذکرہ
دل کو وہی لگا ہوا کھٹکا ہے آج تک

تاعمر یہ فراق بجا دل گرفتگی
پہلو میں کیا وہ درد بھی رکھا ہے آج تک؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
منتخب رباعیات
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

انسان کے پیکر میں اتر آیا ہے ماہ
قد، یا چڑھتی ندی ہے امرت کی اتھاہ
لہراتے ہوئے بدن پہ پڑ جاتی ہے جب آنکھ
رس کے ساگر میں ڈوب جاتی ہے نگاہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہے بسملِ ناز عشق نظارہ پرست
خلقت کے پہلے جیسے ہو صبح الست
یہ کہنی تک آستین چڑھانا تیرا
یہ سارےبدن کی بے حجابی سر دست
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اٹھ اٹھ کے جھکی نگاہِ جاناں کیسی
ہوتی تھی ابھر ابھر کے پنہاں کیسی
فوارۂ خوں کا حال سینے میں نہ پوچھ
دل پر چلتی رہی ہیں چھُریاں کیسی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دل تھا کہ کوئ شمعِ شبستانِ حیات
اندھیرا ہوا بجھتے ہی، کہنے کی ہے بات
دل ہی تھا کہ جس کا ساتھ دینے کے لئے
بیٹھے ہوئے رویا کیے ہم رات کی رات
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہر جلوے سے اک درسِ نمو لیتا ہوں
چھلکے ہوئے صد جام و سبو لیتا ہوں
اے جانِ بہار، تجھ پر پڑتی ہے جب آنکھ
سنگیت کی سرحدوں کو چھو لیتا ہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گیسو بکھرے ہوئے گھٹائیں بے خود
آنچل لٹکا ہوا، ہوائیں بے خود
پر کیف شباب سے ادائیں بے خود
گاتی ہوئی سانس سے ادائیں بے خود
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رخسار پہ زلفوں کی گھٹا چھائ ہوئ
آنسو کی لکیر آنکھوں میں لہرائ ہوئ
وہ دل امڈا ہوا، وہ پریمی سے بگاڑ
آواز غم و غصے سے بھرّائ ہوئ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آنسو سے بھرے بھرے وہ نینا رس کے
ساجن کب اے سکھی تھے اپنے بس کے
یہ چاندنی رات، یہ برہ کی پیڑا
جس طرح پلٹ گئی ہو ناگن ڈس کے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تاروں کو بھی لوریاں سناتی ہوئی آنکھ
جادو شبِ تار کا جگاتی ہوئی آنکھ
جب تازگی سانس لے رہی ہے دمِ صبح
دوشیزہ کنول سی مسکراتی ہوئی آنکھ!
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
راتوں کی جوانیاں نشیلی آنکھیں
خنجر کی روائیاں کٹیلی آنکھیں
سنگیت کی سرحدوں پہ کھلنے والے
پھولوں کی کہانیاں رسیلی آنکھیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

(0) ووٹ وصول ہوئے

: مضامین سےمتعلقہ شعراء