بند کریں
شاعری مضامینانتخاب ادب نامہ کی جانب سے حماد نیازی کی شاعری سے انتخاب

انتخاب کے مزید مضامین

پچھلے مضامین - مزید مضامین
ادب نامہ کی جانب سے حماد نیازی کی شاعری سے انتخاب
خوبصورت لب و لہجے کے نوجوان شاعر حماد نیازی نے پنجاب یونیورسٹی سے جیالوجی میں رول آف آنر کے ساتھ ایم ایس سی کی اور سرگودھا یونیورسٹی سے ایم اے اردو کیا۔ انہوں نے ٹی وی مواصلات اور پیداوار میں ایک پوسٹ گریجویٹ ڈپلوما بھی کیا.

پیدائش یکم اگست 1984 ۔ تلہ گنگ سے تعلق رکھنے والے خوبصورت لب و لہجے کے نوجوان شاعر حماد نیازی نے پنجاب یونیورسٹی سے جیالوجی میں رول آف آنر کے ساتھ ایم ایس سی کی اور سرگودھا یونیورسٹی سے ایم اے اردو کیا۔ انہوں نے ٹی وی مواصلات اور پیداوار میں ایک پوسٹ گریجویٹ ڈپلوما بھی کیا. تعلیمی زندگی کے دوران نصابی سرگرمیوں میں سرگرم رہے اور بہت سے انعامات اور شاعری کے مقابلوں میں انعامات حاصل کیے۔ آجکل سرگودھا یونیورسٹی میں ایک فیکلٹی ممبر کے طور پر فرائض انجام دے رہے ہیں۔ پاکستان کے بیشتر مشہور رسالوں اور اخبارات میں آپ کا کلام چھپتا رہتا ہے۔ پہلا شعری مجموعہ "دعائوں بھرے دالان" کے نام سے انشاءاللہ اسی سال 2015 میں منظر عام پر آئے گا۔ ایک مصنف کے طور پرانہوں نے شاعر ثروت حسین کا ایک انتخاب مرتب کیا اور جدید دور کے معاصر مصنفین پر مضامین لکھ رہے ہیں۔ انہوں نے 2010-2011 اور 2012-2013 میں جوائنٹ سکریٹری حلقہ ای ارباب ۔ذوق لاہور کے طور پر کام کیا اور اس دوران ادبی سیشن کا اہتمام کیا ہے.
ان کے کلام سے کچھ اشعار اور دو نظمیں آپ احباب کی محبتوں کی نظر

وه ایک آنسو جو ماں کی آنکھوں سے میری آنکھوں په آ گرا تھا
مری نگاہوں کے کینوس پر لہو میں تجسیم ہو رہا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نظر میں اک چراغ تھا،بدن میں ایک باغ تھا
چراغ و باغ ہو چکے ،کوئی رہا ؟ رہا نہیں
ہوس کی رزم گاہ میں ،بدن کی کارگاہ میں
وہ شور تھا کہ دور تک کسی نے کچھ سنا نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سرسراتی گھاس سے میرا گزر ہوتے ہوئے
آئینے جیسا وہ پانی پاؤں سے روندا گیا
دیر تک منظر کو دیکھا اور آنکھیں بند کیں
یک بہ یک منظر مری آنکھوں کے اندر آ گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ستارے حیران ہو رہے تھے
چراغ مٹی سے جل رہا تھا
دکھائی دینے لگی تھی خوشبو
میں پھول آنکھوں پہ مل رہا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب جو لوٹا ہوں تو پہچان نہیں ہوتی ہے
کہاں دیوار تھی ،دیوار میں الماری تھی ؟
وہ حویلی بھی سہیلی تھی پہیلی جیسی
جسکی اینٹوں میں مرے خواب تھے خودداری تھی
بس کوئی خواب تھا اور خواب کے پس منظر میں
باغ تھا، پھول تھے، خوشبو کی نموداری تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بارش کی بوندوں سے بن میں ،تن میں ایک بہار آئی
گھر گھر گائے گیت گگن نے ،گونجیں گلیاں گاؤں کی
سینوں اور زمینوں کا اب منظر نامہ بدلے گا
ہر سو کثرت ہو جانی ہے پھولوں اور دعاؤں کی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دعائيں سينوں کے طاقچوں ميں چراغ ترتيب دے رہي تھيں
نواح ِدل سے نشيب ِجاں تک تمام رستے دمک رہے تھے
پھر اک زمانے ميں پارسائی لہو کے زينے اتر رہی تھی
اور اس زمانے ميں پھول اسکے بدن کو چھو کر بہک رہے تھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چڑیوں کی آبادی ھے
گندم بونے والوں سے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس کو دیکھا اور اس کے بعد مجھے
اپنی حیرت پہ اعتبار آیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں نے رخت سفر میں رکھےہیں
لفظ ،خوشبو .دعا .تری آواز
آب ِ تقدیس سے دھلی آنکھیں
لحنِ معبود میں گندھی آواز
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایسی تنہائی ہے کہ وحشت میں
اپنی آواز بھول جاتا ہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں اپنے باپ کا شہزادہ اس شہر کی دھول میں دھول ہوا
جس شہر میں جوبن بیت گیا ہر شکل مگر انجانی تھی
اک ھاتھ دھرا تھا سینے پر ،اک پھول پڑا تھا زینے پر
جب جی آیا تھا جینے پر ،تب مرنے میں آسانی تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ کسی باغ جیسی حیرانی
اب اگر ہے تو داستانوں میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ کھیت ہرے بھرے تھےایسے
دہقان کا خون جل رہا تھا
دہلیز پہ دل دھرے ہوئے تھے
دالان دعا سے بھر گیا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ذرا سی دیر کو برسا وہ ابر۔ دیرینہ
دھلی دھلائی جبینوں سے دن نکل آیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دشت میں پھول کم هی ملتے هیں
پھر بھی اے دوست، تم اگر ملنا
ریت جوتوں میں آ هی جاتی هے
مجھ سے ملنا تو سوچ کر ملنا
گیت گاتے هوئے گزر جانا
خواب تھامے هوئے جدھر ملنا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ ایک خواب جو آئندہ تک نہیں جاتا
رہے ،رہے نہ رہے دیکھتا رہوں گا میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گرم دوپہروں میں، جلتے صحنوں میں جھاڑو دیتے تھے
جن بوڑھے ہاتھوں سے پک کر روٹی پھول میں ڈھلتی تھی
گرد اڑاتے زرد بگولے در پر دستک دیتے تھے
اور خستہ دیواروں کی پل بھر میں شکل بدلتی تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دیکھو ! کتنا غبار اڑتا ہے
پاؤں رکھو ،ذرا چلو مجھ میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بچپنے کی درس گاہوں میں پرانے ٹاٹ پر
دل نے حیرانی کی پہلی بارگہ تسخیر کی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جھڑتی جاتی ہیں اسی فکر میں بوڑھی شاخیں
یہ پرندہ شب۔ آئندہ میں کیا بولتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں اپنے کرب_سیہ کار سے نکل آیا
طلوع_صبح_ابد گیر ہے، کہانی ہے
ہمارے ہاتھ میں کچھ پھول تھے دعائیں تھیں
یہ اک کہانی سے تعبیر ہے ،کہانی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھ ورق پر لکھ دیا حرف۔ سکوت
دست۔غیبی نے کسی آواز سے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ اداسی قدیم نغمہ ہے
سنتے رہیے گا ،گائیے گا نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ختم ہو جاۓ گی نظارگئ قلب و نظر
خواب اگر یوں نظر انداز کیے جائیں گے
اور وہ دن کہ کہیں کچھ نہ دکھائی دے گا
رنگ تصویر سے ناراض کیے جائیں گے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نظم ٌٌ نقل مکانیٌٌ
سہیلی! دنیا بدل گئی ہے
ہمارے کچے گھروں کے کمروں میں سوکھے پتوں کا کوئی پنکھا نہیں پڑا ہے
ہماری خستہ چھتیں جو گزری تمام راتوں کا آئینہ تھیں
وہاں پہ کالے نحیف جالے لٹک رہے ہیں
ہماری آنکھوں کے خواب گلیوں میں پا برہنہ بھٹک رہے ہیں
پرانے مٹی کے اور پیتل کے برتنوں سے سجے هوئے طاقچوں پہ گردا پڑا ہوا ہے
ہمارے کوزوں میں آب وحشت بھرا گیا ہے
گھروں محلوں میں بوڑھے پیڑوں کے زرد پتے غبار ہونے کے منتظر ہیں
سہیلی !روحوں کی خیمہ گاہوں میں رائیگانی ٹھہر چکی ہے
عقیدتوں کے چراغ کیسے جلیں کہ گھر کی منڈیر باقی نہیں رہی ہے
ہماری سب کھڑکیوں میں روشن حسین لمحے
سمے کے سانپوں نے ایک پل میں نگل لئے ہیں
سہیلی!!
ہم نے عزیز مسکن بدل لیے ہیں .....
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نظم ٌٌسفر'
آوازیں رات کی خاموشی میں اوجھل ہونے کا سندیسہ لائی ہیں
چاند کے آدھے ٹکڑے پر کچھ خوابوں کی تدفین ہوئی ہے
گھڑے کا پانی قطرہ قطرہ ڈول رہا ہے
دیواروں کی مٹی میں برسوں سے گوندھی کچھ پوروں کا لمس اچانک
قلب کدے میں چیخ پڑا ہے
رات کے کالے توے پر وحشت کی روٹی پکنے کو تیار پڑی ہے
گھڑی کی دیمک سانس کا نادیدہ دروازہ چاٹ رہی ہے
میں یادوں کی تختی لے کر
اس پر اپنے گگھو گھوڑے
پریاں ،جگنو ،تتلی ،گڑیا،بنٹے،مور کے پر ،بوسوں کی ٹافی ،
اور حرفوں کا پاک صحیفہ
تصویروں میں ڈھال رہا ہوں
کل اور آج کے سارے رستے چل آیا ہوں
تنہائی کے چوراہے پر آن کھڑا ہوں
چاروں جانب اشکوں کی اک برف جمی ہے
سانس تھمی ہے
اور میرے ہاتھوں سے جیسے
بوڑھی انگلی چھوٹ رہی ہے

(0) ووٹ وصول ہوئے

: مضامین سےمتعلقہ شعراء