Imran Aami Ki Shaeri Se Intikhab

ادب نامہ کی طرف سے عمران عامی کی شاعری سے انتخاب

Imran Aami Ki Shaeri Se Intikhab

نوجوان شاعر عمران عامی کی غزلوں سے چند اشعار یہ شہر تو لگتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کباڑی کی دکاں ہے کھوٹا بھی اُسی مول میں بکتا ہے، کھرا بھی

عمران عامی کی غزلوں سے چند اشعار

___________________________________

یہ شہر تو لگتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کباڑی کی دکاں ہے
کھوٹا بھی اُسی مول میں بکتا ہے، کھرا بھی
ممکن ہے میں اس بار۔۔۔۔۔۔۔۔۔بھٹک جاؤں سفر میں
اِس بار مرے ساتھ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہوا بھی ہے، دیا بھی
......................
شوقِ گریہ میں اداکاری کیا کرتے تھے
زندہ لاشوں پہ عزاداری کیا کرتے تھے
عشق کے نام سے واقف تھے نہ اِس کام سے ہم
کیفیت خود پہ مگر طاری کیا کرتے تھے
......................
بات دل کو مِرے لگی نہیں ہے
میرے بھائی! یہ شاعری نہیں ہے
جانتی ہے مِرے چراغ کی لَو
کون سے گھر میں روشنی نہیں ہے
......................
چھوڑ سکتے ہیں تری نیند چُرانے کا خیال
ہم تجھے بے سروسامان بھی کر سکتے ہیں
ہم اگر دشت کو آنکھوں میں بسانے لگ جائیں
پھُول چہروں کو پشیمان بھی کر سکتے ہیں
......................
ایک پل آنکھ کیا لگی میری
لے گیا خواب وہ سرہانے سے
دو قدم کے ہی فاصلے پر ہے
ایک مسجد، شراب خانے سے
......................
جنوں کی مان کے آیا تھا رزم گاہ کی سمت
یہ جنگجو بھی مجھے مصلحت سکھانے لگا
جہاں پہ نوحہ گری کا مقام تھا عامی
ہجوم ِ شہر وہاں تالیاں بجانے لگا
......................
ہماری سمت یہ دریا یونہی نہیں آتا
طلب فقیر کو ہوتی ہے آستانے کی
......................
لاؤ کوئی مثال۔

(جاری ہے)

۔۔۔۔۔۔۔ ہمارے بغیر بھی
ہم نے کیا ہے عشق تمہارے بغیر بھی
۔......................
ہر اِک حسین پہ اِس کو لُٹا نہیں سکتے
ہمارا عشق غنیمت کا مال تھوڑی ہے
......................
ہمارے اشک اگر طاق پر دھرے رہتے
تو یہ چراغ یہاں خاک پر دھرے رہتے
......................
مجھے چراغ کی عزت کا پاس ہے ورنہ
ہوا تو پاؤں پکڑتی ہے روز آ کے مرے
فقط کتابیں نہیں خواب بھی پڑے ہوئے ہیں
تُو دیکھ سکتا ہے کمرے میں یار جا کے مرے
......................
شاخِ گریہ پہ گُل ِ تازہ نہیں آنے کا
باغ سکتے میں ہے آوازہ نہیں آنے کا
......................
ورنہ ہم لوگ کم و بیش میں آ ہی جاتے
دشت نے قیس کی تشہیر زیادہ کی ہے

عمران عامی

(3009) ووٹ وصول ہوئے

Related Articles

Your Thoughts and Comments

Imran Aami Ki Shaeri Se Intikhab - Read Urdu Article

Imran Aami Ki Shaeri Se Intikhab is a detailed Urdu Poetry Article in which you can read everything about your favorite Poet. Imran Aami Ki Shaeri Se Intikhab is available to read in Urdu so that you can easily understand it in your native language.

Imran Aami Ki Shaeri Se Intikhab in Urdu has everything you wish to know about your favorite poet. Read what they like and who their inspiration is. You can learn about the personal life of your favorite poet in Imran Aami Ki Shaeri Se Intikhab.

Imran Aami Ki Shaeri Se Intikhab is a unique and latest article about your favorite poet. If you wish to know the latest happenings in the life of your favorite poet, Imran Aami Ki Shaeri Se Intikhab is a must-read for you. Read it out, and you will surely like it.